مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

حکمران سے حکومت کا کوئی خطرہ نہیں ہے: فرشاد عاشق اعوان

انفارمیشن اینڈ براڈکاسٹنگ پر وزیر اعظم کے خصوصی اسسٹنٹ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے بدھ کو کہا کہ حکومت مخالفین سے کسی بھی خطرے کا سامنا نہیں کرتا.

آوان نے ٹویٹر لے کر کہا، “اے پی سی فلم کو اسکرین پر لے جانے سے قبل بھی اسکرین لے جایا گیا ہے. قیدیوں کی قیادت مولانا فاضل کو ہر وقت کال کرتی ہے اور اس کے بعد اپنی کرسی کو دور کرتی ہے. ہم مولانا فضل سے ہمدردی رکھتے ہیں کیونکہ حزب اختلاف کے کمزور کندھے اس کے بوجھ کو برداشت کرنے کے لئے تیار نہیں ہیں. “

“حکومت حزب اختلاف کے کسی بھی خطرے کا سامنا نہیں کرتا. حزب اختلاف اپوزیشن سے ڈرتے ہیں. مولانا فضل الرحمن نے اس انتخاب کے نتیجے میں اس کے انتخاباتی مہم کے مقابلے میں کوئی فرق نہیں رکھا جائے گا. “

اعوان نے مزید کہا، “مولانا فضل الرحمن اے پی سی کی ناکامی کے بعد اپنے اگلے چار سال مذہب میں وقف کرنا چاہئے.”

آج اسلام آباد میں تمام جماعتوں کے کانفرنس (اے پی سی) کے سربراہ جمعیت علماء ف کے رہنما مولانا فضل الرحمن ہوں گے.

ذرائع نے بتایا کہ خیبر پختونخواہ امیر مقان، پنجاب سے رانا ثناء اللہ، بلوچستان سے عبدالقدیر بلوچ اور سندھ کے شاہ محمد شاہ سے اے پی سی میں شرکت ہوگی.

جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی نے اجلاس کے لئے پانچ رکنی وفد کا اعلان کیا ہے، تاہم، کیا پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو سیشن میں حصہ لینے یا آج پارلیمانی رہنماؤں کے اجلاس میں فیصلہ نہیں کریں گی.

مولانا فاضل نے حلیم بزنجو، سردار اختر منگل، محمود اچکزئی، اسفندیار ولی اور آفتاب شیرپاؤ کو بھی دعوت دی ہے. ممتاہ مجلس امال کے رہنما سجاد نقوی، ساجد میر، شاہ اویس نورانی بھی مدعو کیے گئے ہیں..

ثاقب شیخ۔