خیبر پختونخواہ حکومت کا کیبل آپریٹرز کو اے آر وائی نیوز چلانے کا حکم

کیبل آپریٹرز اور ڈسٹری بیوٹرز

سندھ ہائی کورٹ کی ہدایات کے بعد، خیبر پختونخوا حکومت نے منگل کو کیبل آپریٹرز اور ڈسٹری بیوٹرز کو اے آر وائی نیوز کی نشریات فوری طور پر بحال کرنے اور چلانے کا حکم دیا ہے۔

 کے پی حکومت نے ڈویژنل کمشنرز کو ہدایت کی ہے کہ وہ ڈسٹری بیوشن نیٹ ورکس پر اے آر وائی نیوز کی نشریات کی بحالی کو یقینی بنائیں۔ 

 یہ پیشرفت سندھ ہائی کورٹ (ایس ایچ سی) کی جانب سے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) اور کیبل آپریٹرز کو فوری طور پر اے آر وائی نیوز کی نشریات بحال کرنے کا حکم دینے کے چند گھنٹے بعد سامنے آئی ہے۔

اے آر وائی نیوز کی ٹرانسمیشن فوری طور پر بحال کرنے کی ہدایت

 جسٹس عقیل عباسی کی سربراہی میں سندھ ہائی کورٹ کے سنگل جج بنچ نے درخواست کی سماعت کی اور پیمرا اور کیبل آپریٹرز کو اے آر وائی نیوز کی ٹرانسمیشن فوری طور پر بحال کرنے کی ہدایت جاری کی۔ 

عدالت نے میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی کو ہدایت کی ہے کہ سندھ ہائی کورٹ کے فیصلے کی خلاف ورزی کرنے والے کیبل آپریٹرز کے خلاف کارروائی کی جائے۔

یہ بھی پڑھیں | کار فرسٹ نامی کمپنی نے پاکستان میں کام کرنا بند کر دیا 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان کا ایک اور بی جے پی لیڈر کی جانب سے گستاخئ رسول پر احتجاج 

دوران سماعت جسٹس عقیل عباسی نے کہا کہ رولز اور عدالتی احکامات کے مطابق کارروائی کریں۔ جج نے کہا کہ “یمرا کو عدالت کے فیصلے پر عمل درآمد کے لیے اپنے وسیع اختیارات کو استعمال کرنا چاہیے۔ جج نے پوچھا کہ ایک کیبل آپریٹر پیمرا کی ہدایات کی خلاف ورزی کیسے کر سکتا ہے۔ 

پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس

اے آر وائی نیوز کی نشریات کی معطلی کے خلاف پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس (پی ایف یو جے) کی کال پر ملک بھر میں یوم سیاہ منایا گیا۔ 

 پی ایف یو جے کے صدر افضل بٹ کی کال پر پاکستان بھر کے صحافیوں نے اے آر وائی نیوز کی نشریات کی معطلی کے خلاف احتجاج ریکارڈ کرانے کے لیے یوم سیاہ منایا۔ 

 یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ صحافی برادری کے خلاف ایک نئے اقدام میں وزارت داخلہ نے اے آر وائی نیوز کا این او سی بغیر کسی نوٹس کے منسوخ کر دیا تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔