پنجاب میں ن لیگی وفاقی وزراء کے خلاف دہشت گردی کے مقدمے

مذہبی منافرت کو ہوا دینے کے الزام

مذہبی منافرت کو ہوا دینے کے الزام میں مسلم لیگ (ن) کے دو وفاقی وزراء مے خلاف مقدمہ درج

پنجاب حکومت نے پیر کے روز پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان کے خلاف تشدد اور مذہبی منافرت کو ہوا دینے کے الزام میں مسلم لیگ (ن) کے دو وفاقی وزراء اور پی ٹی وی اہلکاروں کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج کر لیا ہے۔

 دہشت گردی کا مقدمہ وفاقی وزیر میاں جاوید لطیف، وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب، پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) کے منیجنگ ڈائریکٹر سہیل خان اور کنٹرولر پروگرام راشد بیگ کے خلاف لاہور کے گرین ٹاؤن تھانے میں درج کیا گیا ہے۔

 مقدمہ ارشاد الرحمان نامی پی ٹی آئی کارکن کی درخواست پر درج کیا گیا۔ 

عمران خان کے بیانات کو توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا

 ایف آئی آر میں کہا گیا کہ میاں جاوید لطیف نے ایک ٹی وی شو کے دوران عمران خان کے بیانات کو توڑ مروڑ کر اور سیاق و سباق کے بغیر پیش کر کے عمران خان کو غیر مسلم، غیر مسلموں کا سہولت کار اور دائرہ اسلام سے باہر قرار دیا۔

اپنے پارٹی ایجنڈے پر عمل کرتے ہوئے، جاوید لطیف نے عمران خان کے خلاف مذہب کارڈ کا استعمال کیا اور جان بوجھ کر فرقہ وارانہ منافرت پھیلانے اور ملک میں مذہبی کشیدگی کو تیز کرنے کے لیے ایسے الفاظ استعمال کیے۔

 شکایت کنندہ نے مزید کہا کہ ان کے بیان کا مقصد امن و امان کی صورتحال پیدا کرنا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | شہباز شریف کے پاس پیسے مانگنے کے علاوہ کوئی پلان نہیں ہے، عمران خان

یہ بھی پڑھیں | شہباز گل کو ضمانت مل گئی

ریمارکس سے پی ٹی آئی کے کارکنوں کو تکلیف ہوئی

 ایف آئی آر میں مزید کہا گیا ہے کہ عمران خان کے بارے میں مسلم لیگ ن کے رہنما کے ریمارکس سے پی ٹی آئی کے کارکنوں اور ان کے لاکھوں فالورز کو تکلیف پہنچی۔ 

 اگلے روز جاوید لطیف نے پریس کانفرنس کے دوران عمران خان پر ایک بار پھر الزام دہرایا۔ 

 شکایت کنندہ نے مسلم لیگ (ن) کے وزرا پر حکومتی وسائل کو اپنے مذموم عزائم اور سیاسی مقاصد کے لیے استعمال کرنے کا الزام لگایا۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی وی کے عہدیداروں کی مبینہ حمایت سے مسلم لیگ ن کے رہنما نے جرم کا ارتکاب کیا ہے اور ان کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔ 

 شکایت کنندہ نے کہا کہ مسلم لیگ ن کے رہنما نے اپنی پارٹی قیادت مریم اورنگزیب اور دیگر کی مشاورت اور حمایت کے بعد عمران خان کے خلاف پروپیگنڈا شروع کیا۔

 عمران خان کے خلاف دہشت گردی کا مقدمہ

 گزشتہ ماہ سابق وزیراعظم عمران خان کے خلاف وفاقی دارالحکومت کے ایف نائن پارک میں ایک ریلی میں ایڈیشنل سیشن جج اور اسلام آباد پولیس کے سینئر پولیس افسران کو دھمکیاں دینے پر انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔ 

 ایف آئی آر اسلام آباد کے مارگلہ تھانے میں مجسٹریٹ علی جاوید کی شکایت پر اے ٹی اے کی دفعہ 7 کے تحت درج کی گئی تھی۔

 اس میں کہا گیا ہے کہ پی ٹی آئی چیئرمین نے ایف نائن پارک میں ایک ریلی میں ایڈیشنل سیشن جج زیبا چوہدری اور پولیس افسران کو پولیس حکام اور عدلیہ کو “دہشت گردی” کرنے کی دھمکی دی۔ 

 ایف آئی آر میں مزید کہا گیا کہ دھمکی کا بنیادی مقصد پولیس افسران اور عدلیہ کو اپنی قانونی ذمہ داریوں کو نبھانے سے روکنا تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔