پاکستان میں پہلا مشتبہ اومیکرون کیس کنفرم ہو گیا

 پاکستانی صحت کے حکام نے ملک میں کورونا وائرس کی اومیکرون قسم کے پہلے کیس کی تصدیق کی ہے۔

 نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) نے پیر کو ایک ٹویٹر پوسٹ میں اومیکرون ویریئنٹ کی تصدیق کی ہے جس کے بارے میں شبہ ہے کہ اس میں دیگر اقسام کے مقابلے زیادہ ٹرانسمیسیبلٹی کی شرح ہے۔ 

 بیان میں کہا گیا ہے کہ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ، اسلام آباد اس بات کی تصدیق کرنے میں کامیاب رہا ہے کہ حال ہی میں کراچی سے ایک مشتبہ نمونہ واقعی کوویڈ19 کا ‘اومیکرون ویرینٹ’ ہے۔

 گزشتہ ہفتے، جنوبی سندھ کے صوبائی وزیر صحت نے ایک غیر ویکسین شدہ شخص میں نئے تناؤ کے مشتبہ کیس کی نشاندہی کی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | نیشنل کمانڈ سینٹر نے کیٹگری “سی” والے ممالک سے پاکستانیوں کو سفر کی اجازت دے دی

یہ بھی پڑھیں | کراچی میں ہزاروں افراد کو موسمیاتی تبدیلی اور پلازہ مسماری کے خلاف احتجاج

وزیر ڈاکٹر عذرا پیچوچو نے گزشتہ ہفتے ایک بیان میں کہا ہے کہ وائرس اس لیے بھی پھیلتا ہے کیونکہ لوگوں کو ویکسین نہیں لگائی جاتی اور اس خاتون کو بھی ویکسین نہیں لگائی گئی تھی۔

یہی وجہ ہے کہ میں درخواست کروں گا کہ آپ کو دوسری خوراک لازمی لینی چاہیے اگر آپ نے حاصل نہیں کی ہے اور اگر آپ کو دونوں خوراکیں مل چکی ہیں اور اسے چھ ماہ ہو چکے ہیں، تو آج ہی اپنی بوسٹر خوراک ضرور حاصل کریں۔ 

 ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) نے کہا ہے کہ فی الحال اومیکرون کی مختلف قسم کے خلاف ویکسین کی افادیت یا تاثیر کے بارے میں کوئی ہم مرتبہ نظرثانی شدہ ثبوت یا ڈیٹا دستیاب نہیں ہے، لیکن تحقیقات جاری ہیں۔

 ڈبلیو ایچ او کے مطابق دنیا کے کم از کم 63 ممالک میں اومیکرون کی مختلف اقسام کا پتہ چلا ہے۔ یہ سب سے پہلے جنوبی افریقہ میں پایا گیا تھا، لیکن اس کے بعد یورپ اور دیگر جگہوں پر بھی دیکھا گیا ہے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔