شہباز گل پمز ہسپتال داخل، میڈیکل ٹیسٹ جاری

شہباز گل کا طبی معائنہ جاری

 سینئر پی ٹی آئی رہنما شہباز گل کا پمز ہسپتال میں طبی معائنہ جاری ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ جمعرات کی صبح سویرے شہباز گل کو سانس لینے میں دشواری کے باعث پمز ہسپتال میں منتقل کیا گیا۔ 

 اڈیالہ جیل کے حکام نے شہباز گِل کو – جو کہ ایک ہفتے سے بغاوت کے مقدمے میں جیل کی سلاخوں کے پیچھے ہے – کو بدھ کی رات دیر گئے اسلام آباد پولیس کے حوالے کر دیا۔ حوالگی کا حکم ایک ضلع اور سیشن عدالت نے پہلے دن دیا تھا۔ 

پمز کے کارڈیک سنٹر میں ڈاکٹروں نے اس کا ابتدائی طبی معائنہ کیا۔ خون کے ٹیسٹ اور ای سی جی سمیت مختلف ٹیسٹ بھی کیے گئے۔ 

شہباز گل کی آکسیجن سیچوریشن لیول

 ذرائع نے بتایا کہ شہباز گل کی آکسیجن سیچوریشن لیول 97 ریکارڈ کی گئی ہے۔ عام لوگوں کے لیے آکسیجن سیچوریشن لیول کے لیے پلس آکسی میٹر ریڈنگ 95 اور 100 فیصد کے درمیان ہوتی ہے۔ مزید یہ کہ کوویڈ19 ٹیسٹ کے لیے بھی ایک نمونہ بھی لیبارٹری کو بھیجا گیا۔ 

انہوں نے ڈاکٹروں کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ابتدائی طبی معائنے میں شہباز گل کی صحت کی حالت تسلی بخش پائی گئی۔ 

 تاہم مجموعی طور پر میڈیکل رپورٹ جلد تیار کی جائے گی اور پی ٹی آئی رہنما کو اسپتال سے ڈسچارج کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ میڈیکل رپورٹ آنے کے بعد کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں | آصف علی زرداری بھی پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے سے ناخوش

یہ بھی پڑھیں | پیپلرز پارٹی نے کراچی ضمنی الیکشن کے لئے اپنے امیدوار کھڑے کر دئیے 

جیل حکام کے حوالے

ذرائع نے مزید بتایا کہ اسلام آباد پولیس نے گل کو خیریت سے جیل حکام کے حوالے کر دیا ہے۔ 

 ‘شہباز گل کی جان خطرے میں’ 

 دریں اثنا، پنجاب کے وزیر داخلہ ہاشم ڈوگر نے کہا کہ گل کی “زندگی کو خطرہ ہے”۔ انہوں نے قبل ازیں تصدیق کی تھی کہ سیاستدان کی صحت ٹھیک ہے۔ 

ہاشم ڈوگر نے کہا کہ پنجاب پولیس نے گل کو قریبی اسپتال منتقل کرنے کی کوشش کی لیکن اسلام آباد پولیس نے انہیں رینجرز کی نگرانی میں وفاقی دارالحکومت منتقل کردیا۔ 

شہباز گل پولیس کی حراست میں

ہاشم ڈوگر نے دعویٰ کیا کہ “شہباز گل کو اسلام آباد پولیس کی حراست میں بھی تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔” 

 انہوں نے کہا کہ شہباز گل کی حالت گزشتہ تین دنوں کے دوران بہتر ہوئی تھی لیکن وہ اب بھی افسردہ ہیں۔ 

شہباز گل کی حالت اس وقت بگڑ گئی جب اسے معلوم ہوا کہ اسے دوبارہ اسلام آباد پولیس کے حوالے کیا جا رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔