توہین رسالت: بھارت نے احتجاج کرنے والوں کے گھر مسمار کر دئیے

انتہا پسندی کے خلاف مسلمانوں کی آوازوں کو خاموش کرنے کے لئے، ہندوستان کی ریاست اتر پردیش میں حکام نے گزشتہ ہفتے توہین رسالت کے خلاف احتجاج کرنے والے متعدد مسلمانوں کے گھروں کو مسمار کر دیا ہے۔

 حکام نے بتایا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں، پولیس نے ایک نوجوان کو حکمراں جماعت کے سابق ترجمان کا سر قلم کرنے کی دھمکی دینے والی ویڈیو پوسٹ کرنے پر گرفتار کیا ہے۔

 وزیراعظم نریندر مودی کی ہندو قوم پرست بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے دو ارکان کے اسلام مخالف تبصروں کے خلاف حالیہ ہفتوں میں مسلمان بھارت بھر میں سڑکوں پر نکل آئے ہیں۔ 

پولیس نے بدامنی کے سلسلے میں 300 سے زیادہ لوگوں کو گرفتار

مسلمانوں اور ہندوؤں کے درمیان جھڑپیں ہوئیں اور بعض صورتوں میں کئی علاقوں میں مظاہرین اور پولیس کے درمیان جھڑپیں ہوئی ہیں۔ اتر پردیش میں پولیس نے بدامنی کے سلسلے میں 300 سے زیادہ لوگوں کو گرفتار کیا ہے۔ 

 ہندوستان کی اقلیتی مسلم کمیونٹی کے کچھ لوگ ان تبصروں کو بی جے پی کے دور حکومت میں عبادت کی آزادی سے لے کر  اسکارف پہننے تک کے مسائل پر دباؤ اور تذلیل کی تازہ ترین مثال کے طور پر دیکھتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | بھارت میں گستاخانہ بیانات: پاکستان کی اقوام متحدہ سے خاموش نا رہنے کی اپیل

یہ بھی پڑھیں | انڈیا: بی جے پی کی جانب سے نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم گستاخی کی شان میں گستاخی کے بعد شدید احتجاج 

بی جے پی نے اپنی ترجمان نوپور شرما کو معطل کر دیا ہے اور ایک اور رہنما نوین کمار جندال کو پارٹی سے نکال دیا ہے۔

  بی جے پی کے ریاستی ترجمان نے کہا کہ  ریاست اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ نے حکام کو حکم دیا کہ وہ تمام  تنصیبات اور لوگوں کے گھروں کو گرا دیں جن پر گزشتہ ہفتے احتجاج میں ملوث ہونے کا الزام ہے۔ 

ریاست میں جمعہ کی نماز کے بعد پتھر پھینکنے کے الزام

 احتجاج کرنے والی ایک خاتون جس کی بیٹی مسلم حقوق کی ایک کارکن ہے کا گھر اتوار کو پولیس کی بھاری موجودگی کے درمیان منہدم کر دیا گیا۔ ریاست میں جمعہ کی نماز کے بعد پتھر پھینکنے کے الزام میں دو اور لوگوں کی جائیدادیں بھی منہدم کر دی گئیں۔

  اپوزیشن لیڈروں نے کہا کہ آدتیہ ناتھ کی حکومت مظاہرین کو خاموش کرنے کے لیے غیر آئینی طریقہ اختیار کر رہی ہے۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں