مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

ترقی یافتہ ممالک میں زیادہ مانگ کی وجہ سے پاکستان میں انفلوئنزا کی کوئی ویکسین نہیں: رپورٹ

دنیا بھر میں کورونا وائرس کی دوسری لہر کے دوران ، مغربی ممالک میں انفلوئنزا ویکسین کی طلب میں کئی گنا اضافہ ہوا ہے جس سے یہ ویکسن فی الحال پاکستان سمیت متعدد ترقی پذیر ممالک کے لئے دستیاب نہیں ہے۔ 

اکتوبر اور نومبر کو فلو کی زد میں آنے کا اہم وقت سمجھا جاتا ہے  لیکن ملک میں ویکسین کی کمی ہزاروں افراد کو متاثر کررہی ہے خاص طور پر وہ لوگ جو فلو سے وابستہ پیچیدگیوں کا زیادہ شکار ہوتے ہیں۔

  ماہرین صحت اور دنیا بھر کی ماہرین صحت کمیونٹی نے خاص طور پر زیادہ خطرہ والے افراد سے گزارش کرتے ہیان کہ وہ ہر سال اکتوبر میں انفلوئنزا کے خلاف ٹیکے لگائیں تاکہ کافی تعداد میں امراض اور اموات کو کم کیا جاسکے۔ لیکن اس سال ، ملک میں انفلوئنزا ویکسین کے تقسیم کاروں کو دو معروف مینوفیکچررز کی طرف سے ابھی تک ویکسین کی ایک بھی شیشی نہیں ملی ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | لاہور ایک دفعہ پھر دنیا کے آلودہ ترین شہروں میں سرفہرست

سنوفی ایس اے ایک فرانسیسی ملٹی نیشنل دواسازی کمپنی ہے جس کا مین دفتر پیرس ، فرانس میں ہے اور اس وقت پاکستان میں بائیکاٹ کی موجودہ صورتحال کی وجہ سے اس کی مصنوعات درآمد نہیں کی جا رہی ہیں جبکہ ایبٹ نے پاکستان میں تقسیم کاروں کو انفلوئنزا ویکسین فراہم نہیں کی ہے کیونکہ ان کو ترقی یافتہ ممالک کی جانب سے بھاری آرڈر موصول ہو رہے ہیں۔ 

 رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انفلوئنزا ویکسین ہر سال اپ ڈیٹ ہوتی ہے۔ یہ اکتوبر میں دنیا بھر کی منڈیوں میں دستیاب ہے۔ انفلوئنزا کے خلاف تازہ ترین ویکسین وائرس کے تناؤ سے تیار کی گئی ہے۔

 پاکستان میں تقسیم کاروں کے مطابق ، ایبٹ نے ماضی کی مشق کے مطابق بین الاقوامی برادری کے لئے یہ ویکسین تیار کی ہے لیکن ترقی یافتہ ممالک کی طلب اس سال بہت زیادہ ہے لہذا وہ پاکستان میں آبادی کے لئے ویکسین فراہم نہیں کرسکتے ہیں۔

 محکمہ صحت ، اسلام آباد کے ڈاکٹر محمد نجیب درانی نے پیر کو نجی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ترقی یافتہ ممالک میں ویکسین کی طلب زیادہ ہے جس کی بنیادی وجہ کورونا وائرس ہے۔ ترقی یافتہ ممالک میں زیادہ خطرہ والے افراد فلو سے بچنے کے لئے فلو شاٹ لینا چاہیں گے جس سے وہ مدافعتی سمجھوتہ کرسکیں اور ان کا خیال ہے کہ فلو کی وجہ سے وہ وائرس کا آسانی سے شکار ہو سکتے ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔