اپوزیشن کے شدید احتجاج کے باوجود حکومت منی بجٹ پاس کروانے میں کامیاب

حکومت اور اس کے اتحادیوں نے جمعرات کو فنانس (ضمنی) بل 2021 اور ایس بی پی ترمیمی بل 2021 کو قومی اسمبلی کے ذریعے منظور کروا لیا ہے جس کے بعد 6 بلین ڈالر کی توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) کے  چھٹے جائزے کو بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ایگزیکٹو بورڈ سے منظوری مل گئی ہے۔ 

 گزشتہ ماہ وزیر خزانہ شوکت ترین نے 375 ارب روپے کے منی بجٹ کو نافذ کرنے اور مرکزی بینک کو خود مختاری دینے کے لیے دو بل پارلیمنٹ میں پیش کیے تھے۔ 

پارلیمنٹ کا اجلاس جمعرات کی سہ پہر سپیکر اسد قیصر کی صدارت میں دوبارہ شروع ہوا۔ 

اپوزیشن کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ فنانس بل کا مقصد نئے ٹیکس لگانا نہیں بلکہ ٹیکس نیٹ کو وسیع کرنے کے لیے معیشت کی مدد کرنا ہے۔ 

 شوکت ترین نے کہا کہ حکومت نے بنیادی ضروری اشیاء جیسے دودھ، روٹی، لیپ ٹاپ اور سولر پینلز پر ٹیکس چھوٹ واپس نہ لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | مری کے ہوٹل مالکان کی حکومت سے مری بائیکاٹ مہم روکنے کی اپیل

دریں اثنا، اپوزیشن سے تعلق رکھنے والے قانون سازوں سے اس پر رائے حاصل کرنے کے مقصد سے فنانس (ضمنی) بل 2021 کو گردش کرنے کی تحریک کو اکثریتی ووٹ سے مسترد کر دیا گیا تھا۔

 اپوزیشن کے مطالبے پر اسپیکر قومی اسمبلی نے تحریک التواء پر ووٹنگ کا حکم دیا۔ کل 150 قانون سازوں نے تحریک کے حق میں ووٹ دیے جبکہ 168 نے مخالفت کی۔

 قومی اسمبلی کے اہم اجلاس کے آغاز سے قبل وزیراعظم عمران خان پارلیمنٹ پہنچے اور پی ٹی آئی کی قیادت میں حکمران اتحاد میں شامل جماعتوں کے پارلیمانی گروپوں کا اجلاس منعقد کیا جس میں اپوزیشن کی مزاحمت کا مقابلہ کرنے اور بل کو آگے بڑھانے کی کوششوں سے متعلق بات چیت ہوئی۔

  اطلاعات کے مطابق خیبر پختونخواہ کو قدرتی گیس کی فراہمی نہ ہونے پر وزیر دفاع پرویز خٹک اور وزیر توانائی حماد اظہر کے درمیان گرما گرم تبادلہ ہوا۔ 

پرویز خٹک نے موجودہ صورتحال پر برہمی کا اظہار کیا اور مبینہ طور پر بعد میں اجلاس چھوڑ دیا۔ تاہم، وہ بعد میں میٹنگ میں واپس آئے اور کہا کہ انہوں نے “سگریٹ پینے” کے لیے اجلاس چھوڑا تھا۔

 اپوزیشن کی جانب سے بھی پارلیمنٹ کے باہر احتجاج کیا گیا جس کی قیادت قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف اور مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے کی۔

 پارٹی کے حامیوں سے خطاب کرتے ہوئے، انہوں نے کہا کہ اپوزیشن نے منی بجٹ کو مسترد کر دیا ہے کیونکہ اس سے عام آدمی پر نئے ٹیکسوں کا مزید بوجھ پڑے گا اور مہنگائی کا دباؤ بڑھے گا۔ 

 دوسری جانب وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ منی بجٹ سے ملکی معیشت میں استحکام آئے گا۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔