آئی ایم ایف نے پاکستان میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارے اود مہنگائی میں اضافے کی پیشنگوئی کر دی

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے منگل کے روز پاکستان کی اقتصادی شرح نمو چار فیصد رہنے کی پیش گوئی کی ہے اور رواں مالی سال کے دوران مہنگائی اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ تخمینہ سے زیادہ ہونے کی بھی پیشنگوئی کی ہے۔ 

 ترقی کی پیشن گوئی عام طور پر دوسرے ترقیاتی قرض دہندگان کے اسی طرح کے تخمینوں کے مطابق ہے – جیسے کہ ورلڈ بینک کے 4.3 فیصد اور ایشیائی ترقیاتی بینک کے 4 فیصد اور کریڈٹ ریٹنگ ایجنسیوں – موڈیز کے 3-4 فیصد – لیکن بجٹ 2021۔22 میں مقرر کردہ 4.8 فیصد ہدف سے نمایاں طور پر کم ہے۔ 

 اپنے ورلڈ اکنامک آؤٹ لک 2022 میں، آئی ایم ایف نے رواں سال کے لیے افراط زر کی اوسط شرح 8.9 فیصد کے مقابلے میں گزشتہ سال 11.2 فیصد رہنے کا اندازہ لگایا ہے۔

 واشنگٹن میں مقیم قرض دینے والی ایجنسی نے پاکستان کے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کو جی ڈی پی کے 5.3 فیصد (گزشتہ مالی سال کے صرف 0.6 فیصد سے زیادہ) اور 7 فیصد بے روزگاری کی شرح پر بھی کام کیا، جو گزشتہ سال کے 7.4 فیصد سے قدرے کم ہے۔ 

 یہ حکومت کی جانب سے رواں سال کے لیے جی ڈی پی کی شرح نمو کے لیے 4.8 فیصد، افراط زر کی شرح 8 فیصد اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ جی ڈی پی کے صرف 0.7 فیصد کے اہداف کے بالکل برعکس ہے۔۔

یہ بھی پڑھیں | پرویز الہی نے لوگوں کو اسمبلی بلایا اور تشدد پر اکسایا، حمزہ شہباز 

 مزید برآں، آئی ایم ایف نے اگلے مالی سال  کے دوران اقتصادی ترقی کی شرح جی ڈی پی کے 4.2 فیصد تک پہنچنے کی پیش گوئی کی ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ مہنگائی کی شرح اس سال 11.2 فیصد سے کم ہو کر اگلے سال 10.5 فیصد ہو جائے گی۔ فنڈ نے مالی سال 23 میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ جی ڈی پی کے 4.1 فیصد تک گرنے کا تخمینہ بھی لگایا ہے۔

 ڈبلیو ای او نے کہا ہے کہ پاکستان میں بیروزگاری کی شرح گزشتہ سال 7.4 فیصد کے مقابلے اس سال 7 فیصد رہنے کا تخمینہ لگایا گیا تھا اور اگلے سال مزید کم ہو کر 6.7 فیصد رہ جائے گا۔

 انہوں نے عالمی نمو 2021 میں تخمینہ 6.1 فیصد سے کم ہوکر 2022 اور 2023 میں 3.6 فیصد رہنے کی پیش گوئی کی۔ یہ جنوری کے اندازوں سے 2022 اور 2023 کے لئے 0.8 اور 0.2 فیصد پوائنٹس کم ہے۔ سال 2023 کے بعد، درمیانی مدت کے دوران عالمی نمو تقریباً 3.3 فیصد تک گرنے کی پیش گوئی کی گئی ہے۔ 

یہ پیشن گوئی اس مفروضے پر مبنی ہے کہ تنازعہ یوکرین پر روس پر مزید پابندیوں سے توانائی کا شعبے متاثر ہو گا اور کورونا کے صحت اور معاشی اثرات 2022 کے دوران کم ہو جائیں گے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں