یوکرین سے 35 پاکستانی طلباء کو پولینڈ منتقل کر دیا گیا

یوکرین میں پاکستانی سفارتخانے نے جمعہ کی رات بتایا کہ تقریباً 35 پاکستانی طلباء کو یوکرین سے پولینڈ پہنچا دیا گیا ہے۔ 

ایک طالب علم کے پیغام کے مطابق، ان کے کچھ ساتھی یوکرین کے شمال مشرقی شہر خارکیف سے پولینڈ جانے والی ٹرین میں سوار ہونے میں کامیاب ہو گئے ہیں جو روسی حملے سے فرار ہونے والے لوگوں کو لے جا رہی تھی۔ 

شہر میں تقریباً 300 پاکستانی طالب علم ہیں۔ پاکستانی طلباء کا ایک اور بڑا گروپ دارالحکومت کیف میں مقیم ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | پاکستان نئی ٹیکنالوجی کو اپنا کر ایک بلین ڈالر بچا سکتا ہے 

 خبروں کے مطابق جمعرات کو روسی حملے کے آغاز کے بعد سے 500 طلباء سمیت تقریباً 1500 پاکستانی یوکرین میں پھنسے ہوئے ہیں۔ کچھ پہلے ہی ملک چھوڑ چکے تھے۔ 

 سفارتخانے نے ٹویٹر پر پوسٹ کرتے ہوئے کہا کہ اس نے ان طلباء کے انخلاء میں سہولت فراہم کی ہے اور وارسا میں ان کی مزید آمدورفت کے انتظامات کر رہے ہیں۔ 

دفتر خارجہ نے کہا کہ 35 سے 40 طلباء کا ایک اور گروپ کھرکیو سے ترنوپل کے راستے پر تھا اور توقع ہے کہ ہفتہ کی دوپہر تک وہاں پہنچ جائے گا۔ 

 وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے میڈیا بریفنگ میں کہا کہ سفارتخانے کو عارضی طور پر کیف سے پولینڈ کی سرحد پر واقع ترنوپل منتقل کر دیا گیا ہے تاکہ انخلاء میں آسانی ہو۔ انہوں نے کہا کہ یوکرین میں تمام پاکستانی محفوظ ہیں۔

 سفارت خانہ طلباء کو ترنوپیل پہنچنے کا مشورہ دے رہا ہے۔ تاہم، سوشل میڈیا پر پیغامات میں طلباء نے سوال کیا کہ وہ ٹرانسپورٹ کی عدم موجودگی اور سیکیورٹی کی ناگفتہ بہ حالت میں سینکڑوں کلومیٹر کا سفر کیسے کر سکتے ہیں۔ انہوں نے سفارت خانے سے رابطہ کرنے میں مشکلات کی شکایت بھی کی۔ 

یاد رہے کہ قبل ازیں سوشل میڈیا پر طلباء اور دیگر پاکستانیوں کی جانب سے انخلاء میں مدد کی اپیل کی ویڈیوز سامنے آئی تھیں۔ 

 دریں اثنا، پولینڈ، رومانیہ اور ہنگری میں پاکستانی مشنز کو دفتر خارجہ نے یوکرین سے باہر آنے والے پاکستانیوں کی مدد کرنے کے لیے کہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں