یورپی یونین کے سفیروں کے یوکرین متعلق بیانات سفارتی اصولوں کے خلاف ہیں، پاکستان

پاکستان نے جمعہ کو یوکرین کی صورتحال کے بارے میں یورپی یونین اور دیگر ممالک کے سفیروں کی طرف سے جاری کردہ پریس ریلیز پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا ہے کہ یہ سفارتی اصولوں کے خلاف ہے۔ 

جمعہ کو ہفتہ وار پریس بریفنگ سے خطاب کرتے ہوئے دفتر خارجہ کے ترجمان عاصم افتخار نے کہا کہ پاکستان کے خلاف سخت موقف مناسب نہیں۔ یورپی ممالک کے سفارت خانوں کو نامناسب ردعمل سے گریز کرنا چاہیے تھا۔ یہ رویہ ناقابل قبول ہے اور پاکستان نے سفارتخانوں کو اپنی تشویش سے آگاہ کیا ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ پاکستان امریکہ اور یورپی یونین سمیت تمام ممالک کے ساتھ متوازن اور وسیع البنیاد تعلقات چاہتا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان ایک واضح ذہن اور اچھی سوچ والی خارجہ پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان بھارت سمیت اپنے پڑوسیوں کے ساتھ بھی خوشگوار تعلقات چاہتا ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | وزیرستان: دو سیکورٹی آپریشنز میں آٹھ دہشتگرد ہلاک  

یہ بھارت کا دشمنانہ رویہ ہے جس نے ہمیں ایسی صورتحال تک پہنچا دیا ہے جہاں مذاکرات کا راستہ بند کر دیا گیا ہے۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں بھی ملوث ہے۔ یہ کارروائیاں سنگین خلاف ورزیاں ہیں جو بھارت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے میں رکاوٹ ہیں۔ 

 عاصم افتخار نے کہا کہ بھارت بھی پاکستان میں تخریبی سرگرمیوں اور دہشت گردی میں ملوث ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کی گرفتاری نے پاکستان اور خطے میں بھارت کی دہشت گردی کی کارروائیوں کو بے نقاب کر دیا ہے۔ پاکستان بھارت کی اس پالیسی کا مقابلہ کرنے کے لیے پرعزم ہے جو دہشت گردی کو ریاستی پالیسی کے ایک آلہ کے طور پر استعمال کر رہا ہے اور ہم آخری دم تک اس کا مقابلہ کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔

 ایک سوال پر ترجمان نے کہا کہ یوکرین میں پاکستانی مشن پاکستانی شہریوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کرنے کے لیے ہر ممکن مدد اور تعاون فراہم کرنے کے لیے چوبیس گھنٹے کام کر رہا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں