مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

یورپی یونین کا افغانستان کے لئے 1.2 ملین ڈالر کی امداد کا اعلان

 افغانستان افغانستان

یورپی یونین نے افغانستان کے لیے انسانی بنیادوں پر ایک ارب یورو (1.15 بلین ڈالر) کے امدادی پیکیج کا اعلان کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وان ڈیر لیین نے یہ وعدہ اٹلی کی میزبانی میں ایک آن لائن جی 20 سربراہی اجلاس میں کیا جس میں افغانستان میں انسانی اور سیکورٹی کی صورت حال پر بات چیت کی گئی۔

 اگست میں طالبان کی حکومت کے بعد افغانستان پر جی 7 اجلاس کے بعد ، اطالوی وزیر اعظم ماریو ڈراگی نے دیگر عالمی طاقتوں پر مشتمل وسیع تر بحث پر زور دیا۔

جی 20 میں امریکہ ، یورپی یونین ، چین ، ترکی ، روس ، بھارت اور سعودی عرب شامل ہیں۔ 

وان ڈیر لیین کے بیان میں اس بات پر زور دیا گیا کہ یورپی یونین کے فنڈز افغانوں کے لیے “براہ راست مدد” ہیں اور یہ زمین پر کام کرنے والی بین الاقوامی تنظیموں کو بھیجے جائیں گے نا کہ طالبان کی عبوری حکومت کو  جسے وہ تسلیم نہیں کرتے ہیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ ہمیں افغانستان میں انسانی اور سماجی معاشی تباہی سے بچنے کے لیے ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے۔ ہمیں یہ سب تیزی سے کرنے کی ضرورت ہے۔

 افغان عوام کو طالبان کے اقدامات کی قیمت نہیں چکانی چاہیے۔ 

یہ بھی پڑھیں | آج ملک بھر کے بڑے شہروں میں ممکنہ طور پر مکمل لاک ڈاؤن لگ سکتا ہے

 یورپی یونین کے ممالک بلاک میں داخل ہونے کی کوشش کرنے والے افغان پناہ گزینوں کے اضافے کے امکان سے محتاط ہیں جیسا کہ شام میں جنگ سے فرار ہونے والے مہاجرین کے ساتھ 2015 میں ہوا تھا۔ 

الجزیرہ کی اسٹیفنی ڈیکر نے کابل سے رپورٹنگ کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان بین الاقوامی امداد پر مکمل طور پر انحصار کر چکا ہے۔ چونکہ اب یہ امداد روک دی گئی ہے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ لوگ اپنے خاندانوں کو کھانا نہیں دے سکتے۔ اس کا مطلب ہے کہ ان کے پاس پیسے نہیں ہیں ، اس کا مطلب ہے کہ نوکریاں نہیں ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔