مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    گورنمنٹ کا تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کے لئے سپریم کورٹ رجوع کرنے کا فیصلہ

    وفاقی کابینہ نے ملک کے انسداد دہشت گردی قانون کے تحت تحریک لبیک پاکستان گروپ کو کالعدم قرار دینے کے بعد حکومت نے جمعرات کے روز تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کی تحلیل کے لئے عدالت عظمی سے رجوع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ 

    کابینہ کی طرف سے ٹی ایل پی پر پابندی عائد کرنے کی سمری کی منظوری اس وقت سامنے آئی جب اس کے ہزاروں کارکن اور حامی اپنے قائد کی گرفتاری اور فرانسیسی سفیر کی ملک بدری کے لئے پورے ملک میں تین دن تک مظاہرے کررہے تھے۔

    یہ بھی پڑھیں | پاکستان کا تحریک لبیک پاکستان پر پابندی لگانے کا فیصلہ

      پابندی عائد کرنے کے بعد ، حکومت نے 16 اپریل کو ٹی ایل پی کی تحلیل کے لئے وفاقی کابینہ کے ممبروں کے درمیان ایک اور سمری بھی ارسال کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے کہا کہ اس معاملے کو پھر سپریم کورٹ میں لے جایا جائے گا۔

     وزیر داخلہ شیخ رشید نے پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ انھوں نے پوری کوشش کی کہ ٹی ایل پی کے ساتھ معاملات مذاکرات کے ذریعے حل کرنے کی پوری کوشش کی لیکن ان کے انتہائی خطرناک ارادے تھے اور وہ 20 اپریل کو ہر صورت اسلام آباد آنا چاہتے تھے۔

    وزیر داخلہ شیخ رشید کے ہمراہ مذہبی امور اور بین المذاہب ہم آہنگی کے وزیر نورالحق قادری نے ، وفاقی دارالحکومت میں ایک نیوز کانفرنس میں اس کی وضاحت کی۔ انہوں نے مزید کہا کہ سفیروں کو ملک بدر کرنے جیسے مطالبات کو قبول کرنا ملک کے لئے انتہائی مشکل صورتحال کا باعث بن سکتا ہے۔

     انہوں نے مزید کہا کہ گستاخانہ خاکوں سے متعلق فرانسیسی سفیر کو ملک بدر کرنے کے لئے ٹی ایل پی کا ذکر کیا۔ انہوں نے کہا کہ تمام وزرا نے ٹی ایل پی کو ممنوعہ تنظیم قرار دینے کے لئے ان کی منظوری کے لئے سمری پر دستخط کیے ہیں۔ 

    انہوں نے مزید کہا کہ آئین کے آرٹیکل 172 کے تحت  کے تحت ایک اور سمری کابینہ کے ممبروں میں بھیجی جائے گی تاکہ ٹی ایل پی کو تحلیل کرنے کا ریفرنس اعلیٰ عدالت کے سامنے دائر کیا جاسکے۔

     انہوں نے کہا کہ وزیر قانون اور پاکستان کے لئے اٹارنی جنرل نے کابینہ کو مشورہ دیا  مہے کہ دونوں ہی سمریوں پر پابندی اور تحلیل دونوں کو تلاش کرنے کے بجائے علیحدہ علیحدہ کی جائے۔ وزارت داخلہ کے ٹی ایل پی کو کالعدم تنظیم قرار دینے کے نوٹیفکیشن میں لکھا گیا ہے کہ وفاقی حکومت کو یہ یقین کرنے کی ذمہ دار بنیادیں ہیں کہ تحریک لبیک پاکستان دہشت گردی میں مصروف ہے اس نے ملک میں امن و سلامتی کے لئے متعصبانہ انداز میں کام کیا اور ملک میں انتشار پھیلانے میں ملوث ہے۔ 

    یاد رہے کہ تحریک لبیک پاکستان کے زیر انتظام لاہور میں مرکزی دھرنے سمیت تین جگہ دھرنے جاری ہیں جو کہ تنظیم اعلامیے کے مطابق حکومت کے معاہدہ پر عمل درآمد نا کرنے کی صورت میں 20 اپریل کو اسلام آباد روانہ ہوں گے۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x