مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    گورنمنٹ نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 20 فیصد اضافے کی منظوری دے دی

    وزیر اعظم عمران خان نے اسلام آباد میں احتجاج کرنے کے ایک روز بعد سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کی منظوری دے دی ہے۔

     ذرائع کا کہنا ہے کہ جمعرات کے روز وزیر داخلہ شیخ رشید ، وزیر دفاع پرویز خٹک اور وزیر مملکت برائے پارلیمانی امور علی محمد خان پر مشتمل ایک حکومتی مذاکراتی ٹیم نے وزیر اعظم سے ملاقات کی۔

     اجلاس میں وزارت خزانہ کے عہدیداروں نے تنخواہوں میں اضافے کی وجہ سے قومی خزانے پر بوجھ کے بارے میں بریفنگ اور تفصیلی معلومات دیں۔

     ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم نے وزارت خزانہ اور مذاکراتی کمیٹی کے عہدیداروں کو بریفنگ دینے کے بعد سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافے کی منظوری دی ، لیکن کابینہ سے بھی اس منظوری کا مطالبہ کیا جائے گا۔

    یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد میں سرکاری ملازمین کا تنخواہ بڑھانے کا مطالبہ، احتجاج پر پولیس کا آنسو گیس

     یاد رہے کہ اس سے قبل آج ہی یہ اطلاع ملی تھی کہ سرکاری کمیٹی اور وفاقی حکومت کے ملازمین کے نمائندوں کے درمیان تنخواہوں میں اضافے کے لئے احتجاج کرتے ہوئے کامیاب بات چیت کی گئی ہے۔

     ذرائع نے بتایا کہ سرکاری ملازمین کے وفد کو ان کی تنخواہوں میں 20 فیصد اضافے اور تمام گرفتار سرکاری ملازمین کی رہائی کی یقین دہانی کروائی گئی ہے۔

     یہ بات چیت وفاقی وزیر دفاع پرویز خٹک کے گھر پر ہوئی۔ وزیر داخلہ شیخ رشید نے ٹویٹر پر مذاکرات کی خبروں کی تصدیق کردی۔ انہوں نے اسلام آباد انتظامیہ کو ہدایت کی ہے کہ وہ تمام گرفتار ملازمین کو فوری رہا کرے۔

      پارلیمانی امور کے وزیر مملکت علی محمد خان نے حکومت کی جانب سے مذاکرات میں حصہ لیا۔  وفاقی حکومت کے ملازمین اپنی تنخواہوں میں اضافے کا مطالبہ کررہے تھے اور بدھ کے روز ان کے رہنما رحمان باجوہ اور نو دیگر افراد کو راتوں رات گرفتار کرنے کے بعد جمع ہوگئے تھے۔ 

    گرفتاریوں کے بعد ، وفاقی دارالحکومت میں سرکاری کارکنوں نے اپنے مطالبات اور اپنے رہنماؤں کی رہائی کے لئے پاکستان سیکرٹریٹ سے پارلیمنٹ ہاؤس کی طرف مارچ کرنے کا اعلان کیا تھا۔ پارلیمنٹ کی طرف پیش قدمی کرنے کے بعد پولیس نے آنسو گیس کی شیلنگ کی۔ ایک موقع پر مظاہرین نے وفاقی وزیر اطلاعات شبلی فراز کو بھی گھیرے میں لے لیا تھا۔

     ایک موقع پر احتجاج کرنے والے ملازمین نے سیکریٹریٹ کے دروازے بھی بند کردیئے جس سے سرکاری مشینری رک گئی۔ کم از کم دو درجن احتجاج کرنے والے ملازمین کو مینٹیننس آف پبلک آرڈر آرڈیننس (ایم پی او) کے سیکشن 16 کے تحت تحویل میں لیا گیا۔ سرکاری ملازمین وفاقی حکومت کے مختلف ملازمین کے مابین ہونے والی آمدنی میں تفاوت کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔ وہ اپنی تنخواہوں میں 40 فیصد اضافے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x