مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

کورونا وائرس کے لئے طبی امداد کی فراہمی پر “آئرن بھائی” کا شکریہ ، چین نے پاکستان کی کوششوں کی تعریف کی.

چینی ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل برائے ایشین امور یاؤ وین نے جمعہ کو ملک میں جاری کورونا وائرس پھیلنے کے دوران پاکستان کی کوششوں کا خیرمقدم کیا۔
بیجنگ میں چین کے سفارت خانے اور چین کی وزارت خارجہ امور کی مشترکہ بریفنگ کے دوران وین نے کہا ، “چین اس وبا کے خلاف جیتنے اور اس پر قابو پانے کے لئے اعتماد ، صلاحیت اور عزم کا حامل ہے۔”
وین نے سامعین کو چین کی حکومت کی طرف سے وباء پر قابو پانے کے لئے اٹھائے گئے مکمل اور غیر معمولی اقدامات سے آگاہ کیا۔
چین کے نئے کورونا وائرس سے وابستہ اموات کی تعداد ہفتے کے روز 722 ہوگئی جبکہ وائرس سے مزید 86 افراد کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔ چینی ہیلتھ کمیشن نے بھی 3،399 نئے کیسوں کی تصدیق کی ، ملک بھر میں 34،500 سے زیادہ تصدیق شدہ انفیکشن کے ساتھ۔
اجلاس میں کورونیو وائرس کے وباء کے دوران چین ، خاص طور پر ووہان اور صوبہ ہوبی میں پاکستانی کمیونٹی کی حمایت اور سہولت کے لئے مشترکہ کوششوں کے بارے میں شریک پاکستانی کمیونٹی ، طلباء اور میڈیا کو اپ ڈیٹ کرنے کے لئے اجلاس منعقد کیا گیا۔
اس سفارتکار نے اس مشکل وقت میں ’آئرن بھائی‘ پاکستان کی حمایت کی تعریف کی اور حکومت پاکستان کو طبی امداد کی فراہمی پر شکریہ ادا کیا۔انہوں نے چینی صدر کو پاکستان کے صدر اور وزیر اعظم کی طرف سے ہمدردی کے پیغامات کا بھی ذکر کیا۔
چین میں پاکستان کی سفیر نگمانہ ہاشمی نے اپنی اہم تقریر میں ، ان آزمائشی اوقات میں چینی قوم کی ہمت اور لچک کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ انہوں نے ثابت کیا ہے کہ وہ اپنے غیر معمولی عزم کے ساتھ اس وباء پر قابو پاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سچے بھائیوں کی طرح پاکستان بھی چین کی طرف سے کندھے سے کندھا ملا کر کھڑا ہوگا۔
انہوں نے زور دے کر کہا کہ سفارتخانہ متعلقہ حکام سے مستقل رابطے میں ہے۔ صوبہ ہوبی ، ووہان اور مختلف یونیورسٹیوں میں جہاں اس وقت پاکستانی طلبا زیر تعلیم ہیں۔
انہوں نے طلباء کو مشورہ دیا کہ وہ ثابت قدم رہیں اور چینی حکومت کے مشورے پر عمل کریں تاکہ زیادہ سے زیادہ حفاظت کو یقینی بنایا جاسکے۔

پاکسیدیلی سے متعلق مزید خبریں پڑھیں:  https://urdukhabar.com.pk/category/international/

ثاقب شیخ۔