کسی پاکستانی کو غدار قرار نہیں دیا جا سکتا، اسلام آباد ہائی کورٹ

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے جمعہ کے روز اپنے ایک بیان میں کہا کہ کسی بھی پاکستانی کو غدار نہیں قرار دیا جاسکتا۔ انہوں نے یہ نوٹس وزارت داخلہ اور اطلاعات کے سیکریٹریوں ، ڈی جی فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) اور اسلام آباد آئی جی پی کو بھی جاری کیا۔

یاد رہے کہ جمعہ کو اسلام آباد ہائیکورٹ (دی نیوز) سے وابستہ صحافی فخر درانی سے متعلق کیس کی سماعت کررہا تھا ، جسے غدار قرار دیا گیا تھا اور مبینہ طور پر کچھ عناصر کی جانب سے ہراساں کیا گیا تھا۔ عدالت نے سرکاری اداروں سے صحافی کو ہراساں کرنے کے معاملے کو بند کرنے کا مطالبہ کیا۔ 

سماعت کے دوران وکیل عمران شفیق نے صحافی کی نمائندگی کرتے ہوئے کہا کہ ان کے مؤکل پر غدار ہونے اور بھارتی خفیہ ایجنسی را سے تعلقات رکھنے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ اس پر جسٹس من اللہ نے پوچھا کہ ان کے خلاف کیا الزامات عائد کیے گئے ہیں۔ درخواست گزار کے وکیل نے جواب دیا کہ کوئی باقاعدہ الزامات نہیں ہیں لیکن ان کا نام ہندوستانی فوج کے ایک سابق افسر سے منسلک کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ تمام بے بنیاد الزامات ہیں ، لیکن ان الزامات نے صحافی اور اس کے اہل خانہ کی جان کو خطرہ میں ڈال دیا ہے۔

 وکیل نے کہا کہ ان کا ایس ای سی پی کے ساتھ رجسٹرڈ ڈیٹا سے بھی کوئی واسطہ نہیں ہے ، وکیل نے مزید کہا کہ ان کے موکل نے وفاقی آبی وسائل کے وزیر فیصل واوڈا کی دوہری شہریت پر ایک کہانی لکھی ہے اور اس نے انہیں پریشان کردیا تھا۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *