چائلڈ لیبر: سندھ میں چھ ملین بچوں کی مزدوری کا انکشاف 

بچے اسکولوں سے باہر ہیں جو چائلڈ لیبر کی بدترین شکل ہے

چائلڈ لیبر کے خلاف اتوار کو عالمی دن منایا گیا جبکہ رپورٹ کے مطابق سندھ میں 6.4 ملین سے زائد بچے اسکولوں سے باہر ہیں جو چائلڈ لیبر کی بدترین شکل ہے جس کی وجہ سے وہ صحت، تعلیم اور دیگر بنیادی سہولیات کے حق سے محروم ہیں۔ 

بچوں کے حقوق پر کام کرنے والی سول سوسائٹی کی تنظیموں نے چائلڈ لیبر کے بڑھتے ہوئے رجحان پر برہمی کا اظہار کیا اور سندھ اور وفاقی حکومتوں سے اس لعنت کے خلاف اقدامات کرنے کی اپیل کی۔ 

صدر ہاری ویلفیئر ایسوسی ایشن اکرم  نے کہا ہے کہ سندھ میں تقریباً 1.7 ملین مزدور ہیں؛ ان میں سے 700,000 سے زیادہ بچے ایسے مزدور ہیں جو زراعت کے شعبے میں ان کے زمینداروں کی طرف سے مسلط کردہ غیر انسانی اور غیر انسانی کام اور زندگی کے حالات میں کام کرتے ہیں۔

  ایچ ڈبلیو اے کے جمع کردہ اعداد و شمار کے مطابق، تقریباً 3329 بچوں کو، جن میں چند ہفتے کی عمر کے نابالغ بچے بھی شامل ہیں، کو ان کے بالغ خاندان کے افراد سمیت زراعت کے شعبے میں زمینداروں کی تحویل سے رہا کیا گیا، جب کہ بچوں کی ایک بڑی تعداد اب بھی ان کی تحویل میں ہے۔ 

 ایچ ڈبلیو اے کے مطابق صوبے میں چوڑیوں، اینٹوں کے بھٹے، فشریز، آٹو ورکشاپس، کپاس کی چنائی، اور مرچ چننے کے شعبوں/سرگرمیوں میں 15 سال سے کم عمر کے بچوں کا استحصال، زیادتی اور تشدد کیا جاتا ہے، لیکن اس کے لیے کوئی ٹھوس کوششیں نہیں کی جاتیں۔

یہ بھی پڑھیں | تازہ ترین: ڈالر کے مقابلے میں روپیہ 204 کا ہو گیا

یہ بھی پڑھیں | بھارتی ظلم: مقبوضہ جموں کشمیر میں تین نوجوان شہید 

انہوں نے کہا ہے کہ معاملات سے نمٹنے کے لیے ذمہ دار تمام سرکاری محکمے بشمول لیبر انسپکٹرز، سماجی بہبود کے افسران، اور چائلڈ پروٹیکشن افسران کارروائی کرنے اور انہیں بچانے کی زحمت نہیں کرتے۔

 ایچ ڈبلیو اے نے اپنے بیان میں اس بات پر افسوس کا اظہار کیا ہے کہ حکومت کی سراسر لاعلمی اور چائلڈ لیبر کے خاتمے کے لیے پالیسی اور منصوبہ بندی کی عدم موجودگی نے بھی بچوں اور ان کے خاندانوں کی مشکلات میں مزید اضافہ کیا ہے۔

 اس کے علاوہ، بڑوں کے لیے کام کی عدم دستیابی، مہنگائی، اور کم اجرت والے کام کی وجہ سے، کم آمدنی والے خاندانوں نے اپنے بچوں کو خطرناک مزدوری میں شامل ہونے کی طرف دھکیل دیا ہے۔

 بیان میں کہا گیا ہے کہ حکومت قوانین متعارف کرانے میں اچھی ہے لیکن ان پر عمل درآمد کرنے میں سب سے بری ہے۔

 بیان میں مزید کہا گیا کہ صوبے میں بہت سے قوانین موجود ہیں، لیکن سب بے سود ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں