پاکستان کے ایران کے ساتھ تین پراجیکٹس پر دستخط

تین یادداشتوں پر دستخط کیے

 پاکستان نے دونوں ممالک کے درمیان مشترکہ اقتصادی کمیشن (جے ای سی) کے 21ویں اجلاس کے دوسرے دن جمعرات کو ایران کے ساتھ میری ٹائم، میوزیم اور معلوماتی نشریات کے شعبوں میں مفاہمت کی تین یادداشتوں پر دستخط کیے ہیں۔ 

 ایک سرکاری بیان کے مطابق، ایرانی وفد کی قیادت اسلامی جمہوریہ ایران کے سڑکوں اور شہری ترقی کے وزیر رستم قاسمی نے کی، جب کہ پاکستانی وفد کی قیادت اسلامی جمہوریہ پاکستان کے وفاقی وزیر تجارت سید نوید قمر نے کی۔ 

اجلاس کے دوران فریقین نے 17-18 اپریل 2017 کو تہران میں ہونے والے مشترکہ اقتصادی تعاون کمیشن کے 20ویں اجلاس کے متفقہ منٹس کی دفعات کا جائزہ لیا۔ 17 اگست کو منعقد ہونے والے تکنیکی اجلاس کو وزارت اقتصادی امور نے سہولت فراہم کی۔ 

 جے ای سی کی اختتامی تقریب کے دوران وزیر تجارت نے کہا کہ پاکستان ایران کے ساتھ تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے۔ وزیر تجارت نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان کافی معاہدوں پر دستخط ہو چکے ہیں، اب ان کے کامیاب نفاذ کے لیے سخت محنت کرنے کا وقت آ گیا ہے۔

 انہوں نے اس بات پر بھی روشنی ڈالی کہ کوئٹہ تفتان روڈ ٹریفک کے قابل ہے تاہم سڑکوں کی مزید بہتری کے لیے مختلف منصوبے شروع کیے جا رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | صدر عارف علوی کی نوجوانوں  سے شجرکاری مہم میم شرکت کی درخواست

یہ بھی پڑھیں | برطانیہ 2025 تک پاکستان کے ساتھ تجارت دوگنی کر دے گا

وزیر نے پاکستانی تاجروں اور زائرین کی سہولت کے لیے ویزا کی شرائط کو آسان بنانے کی ضرورت کا بھی اظہار کیا۔ مزید برآں، انہوں نے اپنے ہم منصب کو یقین دلایا کہ پاکستان دوطرفہ تجارتی حجم کو بڑھانے کے لیے ہر ممکن اقدامات کرنے کے لیے پرعزم ہے۔

دو طرفہ تجارت کو بڑھانے کے لیے، پاکستان کی جانب سے حال ہی میں گبد (قریب گوادر) – ریمدان میں ایک اضافی سرحدی کراسنگ پوائنٹ کو فعال کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ، پاکستان اور ایران کے درمیان بین الاقوامی ٹرانسپورٹ کے معاہدے کا مقصد ترکی سے ایران کے راستے پاکستان تک تجارتی ٹریفک کو آسان بنانا ہے، جبکہ ایرانی سامان اور مسافر پاکستان کے راستے چین تک رسائی حاصل کر سکتے ہیں۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ جے ای سی کے 21ویں اجلاس میں کیے گئے فیصلوں کو عملی جامہ پہنانے کے ساتھ پاکستان کو ترکی کے ذریعے وسطی ایشیائی ریاستوں اور یورپ تک رسائی کے فوائد حاصل ہوں گے۔ قمر نے یہ بھی بتایا کہ پاک ایران تعلقات کی تاریخ میں پہلی بار دونوں ریاستیں بغیر کسی اضافی ٹیرف یا ٹیکس کے ٹرانزٹ ٹریڈ کو آگے بڑھانے کے لیے گرین کوریڈور بنا رہی ہیں۔ 

 سرحدی منڈیوں کے ساتھ سرحدوں پر فری اکنامک زون بنانے کا منصوبہ بھی زیر بحث ہے۔ وزیر نے پاکستان کو 5ویں فریڈم ٹیرف رائٹ کی پیشکش کرنے پر اپنے ہم منصب کی تعریف کی جو ایران کی جانب سے ایک بہترین کاوش ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔