مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

پاکستان کی ترقیاتی رپورٹ سے ایف اے ٹی ایف ‘مطمئن’ ہے.

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) کے ورکنگ گروپ نے مبینہ طور پر پاکستان کی طرف سے پیش کردہ پیشرفت رپورٹ پر اطمینان کا اظہار کیا ہے ، جس میں منی لانڈرنگ پر قابو پانے کے لئے واچ ڈاگ کے 27 نکاتی ایکشن پلان کی تعمیل میں اکتوبر 2019 سے جنوری 2020 تک اپنی کارکردگی شامل ہے۔

وزیر برائے امور امور ڈویژن حماد اظہر کی سربراہی میں ایک وفد نے بیجنگ میں واچ ڈاگ کو پاکستان کی پیشرفت سے آگاہ کیا۔

وفد میں قومی انسداد دہشت گردی اتھارٹی (این اے سی ٹی اے) ، وزارت خارجہ امور ، اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) ، پاکستان کسٹمز ، وزارت داخلہ اور مالیاتی مانیٹرنگ یونٹ کے نمائندے شامل ہیں۔

ایف اے ٹی ایف کے حکام کو بتایا گیا ہے کہ غیر قانونی تنظیموں پر پابندیاں عائد کردی گئی ہیں۔ وفد نے نگران حکومت کو یہ بھی بتایا کہ پاکستان میں دہشت گردی کی مالی اعانت سے متعلق مقدمات کے اندراج میں 451 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ ایف اے ٹی ایف کو بتایا گیا کہ دہشت گردی کی مالی اعانت سے متعلق گرفتاریوں میں 677 فیصد اضافہ ہوا ہے جبکہ ایسے معاملات میں جرمانے دینے کے عمل میں 403 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ پاکستانی وفد نے ایف اے ٹی ایف کو بتایا کہ دسمبر 2019 تک ، دہشت گردی کی مالی اعانت کے کچھ 827 مقدمات درج کیے گئے ہیں۔ جمعرات کو پاکستان اور ایف اے ٹی ایف کے مابین مذاکرات کا آخری دن ہے۔ ورکنگ گروپ کی رپورٹ کی بنیاد پر فروری میں ایف اے ٹی ایف کی مکمل میٹنگ کے ذریعے پاکستان کا فیصلہ ’گرے لسٹ‘ سے ممکنہ طور پر نکلنے یا کم از کم بلیک لسٹ میں داخل ہونے سے گریز کیا جائے گا۔

پاکسیدیلی سے متعلق مزید خبریں پڑھیں: https://urdukhabar.com.pk/category/national/

ثاقب شیخ۔