پاکستان میں عورت مارچ متنازعہ حیثیت کیوں اختیار کرتا ہے؟

ہر سال آٹھ مارچ کو خواتین کے عالمی دن کے موقع پر خواتین سڑکوں پر نکل کر عورت مارچ کے بینر تلے نہ صرف خواتین کے حقوق بلکہ پاکستان میں دیگر پسماندہ گروہوں کے لئے آواز بلند کرتی ہیں۔ 

 یہ سب کیسے شروع ہوا؟ 

عورت مارچ کا خیال اس وقت شروع ہوا جب متعدد خواتین نے اپنے نیٹ ورک کو متحرک کرنے اور خواتین اور عالمی یوم خواتین کے موقع پر تشدد اور ہراساں کرنے کے خاتمے کے مطالبے پر کراچی میں جمع ہونے کا فیصلہ کیا۔ 

اس کے بعد سے یہ ایک وسیع تر تحریک میں تبدیل ہوچکا ہے ، جس میں ٹرانسجینڈر افراد بھی شامل ہیں۔ خواتین کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے بہتر قوانین اور موجودہ قوانین کے نفاذ کا مطالبہ کرنے کے ساتھ ساتھ شعور بیدار کرنے اور رویوں کو بدلنے کا بھی مطالبہ کیا جاتا ہے۔ 

یہ مارچ مغرب میں بھی اسی طرح کے واقعات سے متاثر ہوا تھا ، لیکن گھر میں ہونے والے واقعات نے اس کو مزید تقویت بخشی ہے۔ 

یہ اتنا متنازعہ کیوں ہے؟ 

نعرے “میرا جیسم ، میری مرضی” اور اس سے متعلقہ دیگر نعرے جو سن 2019 میں بحث کا باعث بنے وہ اب تک تنازعات کو جاری رکھے ہوئے ہیں۔ حامیوں کا دعوی ہے کہ اس نعرے میں خواتین کو اپنے لباس پہننے اور ان کے جسموں کو ہراساں کرنے یا جنسی تشدد کے خوف کے بغیر تعلق رکھنے کے حق کو اجاگر کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | کیا وقار زکا درست تھا؟ جانئے کرپٹو کمپین چلانے سے متعلق حقائق

 تاہم ، دوسرے طبقے نے اس نعرے کو پاکستان میں مغربی فریب کاری مسلط کرنے کی کوشش کے طور پر لیا ہے۔ اس کے علاوہ،ان کی جانب سے اس نعرے کو غیر اخلاقی اعر فحش قرار دیا گیا۔

 زرائع کے مطابق 2019 میں ، خیبر پختونخوا اسمبلی نے ملک کے بڑے شہروں میں خواتین کے یوم مارچ کے موقع پر اٹھائے گئے “بے شرم اور غیر اسلامی” نعرے ، پلے کارڈز اور مطالبات  کے خلاف ایک متفقہ قرار داد پاس کی۔ قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے انفارمیشن اینڈ براڈکاسٹنگ نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی پر زور دیا کہ وہ تمام میڈیا چینلز کو ہدایت کریں کہ وہ عورت مارچ سے منسلک ‘اخلاقی بے حیائی’ پر قابو پانے کی سوچی سمجھی کوششوں میں “میرا جِسم ، میری مرضی” جیسے  نعروں کو چلانا بند کریں۔

 سن 2020 میں وفاقی دارالحکومت میں منعقدہ عورت مارچ میں کشیدگی آئی جس میں شرکاء پر پتھراؤ کیا گیا جس سے متعدد افراد زخمی ہوگئے۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x