پاکستان آج بھی امریکا کا اسٹریٹیجک پارٹنر ہے، ترجمان اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کا بیان

امریکی محکمہ خارجہ نے بدھ کے روز اس بات کی تصدیق کی کہ امریکہ پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے اور جہاں تک واشنگٹن کا تعلق ہے، دیگر ممالک کے لیے امریکہ اور چین میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنے کی کوئی ضرورت نہیں تھی۔ 

 ترجمان نیڈ پرائس نے صحافیوں سے یہ پوچھے جانے پر کہ کیا پاکستان اور چین ایک دوسرے کے قریب ہو گئے ہیں، ترجمان نیڈ پرائس نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ ہم نے پوری طرح یہ نکتہ پیش کیا ہے کہ دنیا بھر کے کسی بھی ملک کے لیے یہ شرط نہیں ہے کہ وہ امریکہ اور چین میں سے کسی ایک کا انتخاب کرے۔

 انہوں نے کہا کہ ہمارا ارادہ ہے کہ ہم ممالک کو انتخاب فراہم کریں جب یہ بات آتی ہے کہ ریاستہائے متحدہ کے ساتھ تعلقات کس طرح کے ہیں۔ 

اور ہمارا خیال ہے کہ ریاستہائے متحدہ کے ساتھ شراکت داری بہت سے فوائد کی نشاندہی کرتی ہے جو کہ ممالک کو عام طور پر اس قسم کی شراکت داری کی صورت میں نہیں ملتی جو عوامی جمہوریہ چین نے پوری دنیا میں حاصل کرنے کی کوشش کی ہے۔

 پاکستان امریکہ کا سٹریٹجک پارٹنر ہے۔ ہمارا اسلام آباد میں حکومت کے ساتھ ایک اہم رشتہ ہے، اور یہ ایک ایسا رشتہ ہے جسے ہم متعدد محاذوں پر اہمیت دیتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | افغان حکام نے سیکیورٹی کی خلاف ورزی کے شبہ میں ایک پرواز کو ٹیک آف سے روک دیا

  اسلام آباد-واشنگٹن تعلقات میں اس وقت تناؤ آیا جب ترجمان سے بھارتی اپوزیشن لیڈر راہول گاندھی کے اس بیان پر تبصرہ کرنے کو کہا گیا کہ وزیراعظم نریندر مودی کی غیر موثر پالیسیوں کی وجہ سے چین اور پاکستان پہلے سے کہیں زیادہ قریب ہیں۔ 

ترجمان سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ نے کہا کہ میں یہ پاکستانیوں اور چین پر چھوڑتا ہوں کہ وہ اپنے تعلقات کے بارے میں بات کریں۔ میں یقینی طور پر ان (گاندھی کے) ریمارکس کی تائید نہیں کروں گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں