وزیر اعظم نے دھمکی دینے والے امریکی عہدیدار کا نام بتا دیا

وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کو دھمکی آمیز خط کے بارے میں مزید تفصیلات شیئر کی ہیں۔

 ایوان کو ملتوی کرنے کے بعد، پی ٹی آئی کے متعدد رہنما وزیر اعظم آفس پہنچے اور وزیر اعظم کو “ان کے حیران کن سرپرائز کی کامیابی” پر مبارکباد دی۔

 ٹیلی ویژن پر نشر ہونے والے ریمارکس میں، وزیر اعظم نے انہیں بتایا کہ جب قومی سلامتی کونسل (این ایس سی) نے عدم اعتماد کی قرارداد میں بیرونی طاقت کی شمولیت کی مذمت کی تھی، تو عدم اعتماد تحریک پر ووٹوں کی گنتی “غیر متعلقہ” ہو گئی تھی۔ 

عمران خان نے انکشاف کیا کہ امریکہ نے پاکستان کے سفیر کے ذریعے دھمکی آمیز پیغام بھیجا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ امریکی معاون وزیر خارجہ برائے جنوبی اور وسطی ایشیائی امور ڈونلڈ لو نے مبینہ طور پر سفیر اسد مجید سے ملاقات میں خبردار کیا تھا کہ اگر وہ قومی اسمبلی میں اپوزیشن کی عدم اعتماد کی تحریک میں بچ گئے تو اس کے اثرات ہوسکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | نگران وزیر اعظم تک عمران خان ہی وزیر اعظم کے طور پر کام کریں گے، صدر مملکت     

وزیر اعظم نے کہا کہ ان کے پاس اطلاعات ہیں کہ پی ٹی آئی کے منحرف افراد اکثر امریکی سفارت خانے میں آتے ہیں۔ انہوں نے حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کیا وجوہات تھیں کہ جو لوگ ہمیں چھوڑ کر چلے گئے۔

 انہوں نے ڈپٹی سپیکر کے فیصلے کو اپوزیشن کے لیے “حیران کن” قرار دیا۔ عمران خان نے کہا کہ اپوزیشن یہ سمجھنے سے قاصر ہے کہ کیا ہوا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر وہ ایک دن پہلے اپنے سرپرائز کے بارے میں بتاتے تو وہ اس قدر حیران نہ ہوتے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں