وزیر اعظم شہباز شریف کا گرین اور بلیو میٹرو بس سروس کا افتتاح کر دیا

مسافروں کے لیے ایک قدم ریلیف قرار دیا ہے

وزیر اعظم شہباز شریف نے جمعرات کو ماس ٹرانزٹ میٹرو بس سروس کی گرین اور بلیو لائنوں کا افتتاح کر دیا ہے جو کہ ملک کی پہلی باہم منسلک چار لائن میٹرو سروس ہے۔ انہوں نے ایندھن کی بڑھتی ہوئی قیمتوں سے نمٹنے والے جڑواں شہروں کے مسافروں کے لیے ایک قدم ریلیف قرار دیا ہے۔

 افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے کہا کہ یہ سروس جڑواں شہروں کے رہائشیوں کے لیے ایک تحفہ ہو گی اور عام آدمی، طلباء اور راستوں پر چلنے والے کارکنوں کی خدمت کرے گی۔ 

 یہ سروس بہارہ کہو، جی ٹی روڈ، کورال اور راولپنڈی کو بالترتیب گرین، اورنج، بلیو اور ریڈ لائنز کے ذریعے جوڑے گی۔

 بس سروس بہارہ کہو سے پمز (گرین لائن) اور کورال سے پمز (بلیو لائن) تک چلے گی۔ دونوں لائنیں ریڈ لائن میں ضم ہو جائیں گی اور فیض احمد فیض بس سٹاپ سے مسافر اورنج لائن کو لے کر اسلام آباد انٹرنیشنل ایئرپورٹ جا سکیں گے۔ 

 وزیر اعظم نے ریمارکس دیئے کہ ایک مہذب اور بروقت ٹرانسپورٹیشن سروس عام آدمی کی خدمت ہے اور وزیر داخلہ اور کیپیٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کے چیئرمین کی کاوشوں کو سراہا۔ 

ایک ماہ تک مفت ٹرانسپورٹیشن

 انہوں نے مسافروں کو ایک ماہ تک مفت ٹرانسپورٹیشن خدمات کا بھی اعلان کیا۔

یہ بھی پڑھیں | دعا زہرہ کے والد نے اپنی بیٹی کے لئے جذباتی بیان جاری کر دیا

یہ بھی پڑھیں | بلوچستان : مون سون بارشوں سے 13 افراد ہلاک

 وزیر اعظم نے کہا کہ روات سے کورال تک شٹل سروس زیر غور ہے اور اسے جلد شروع کرنے کے لیے فنڈز فراہم کیے جائیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ قومی خزانے کی ایک ایک پائی شہریوں کی بہتری کے لیے انصاف کے ساتھ خرچ کی جائے گی اور اس بات پر زور دیا کہ ہر عوامی منصوبے کی ترسیل میں کوتاہی سے بچنے کے لیے نگرانی کی جاتی ہے۔ 

 وزیراعظم نے کہا کہ ملک میں قلیل مدتی ریلیف کے اقدامات کے ذریعے مہنگائی پر قابو پانے کی کوششیں جاری ہیں اور مزید کہا کہ حکومت بجلی کی کمی کو کم کرنے کے لیے شمسی توانائی سے بجلی پیدا کرنے کے منصوبوں کو فروغ دے گی۔ 

شہباز شریف نے پنجاب حکومت کی جانب سے 100 یونٹ استعمال کرنے والے صارفین کو مفت بجلی فراہم کرنے کے اقدامات کو بھی سراہا اور امید ظاہر کی کہ دیگر صوبے بھی اس سہولت کی تقلید کریں گے۔ 

 وزیراعظم نے بہارہ کہو میں میٹرو بسوں کے لیے کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کا سنگ بنیاد بھی رکھا، جو چھ ماہ میں مکمل ہونے والا ہے۔ ۔۔۔ چیئرمین سی ڈی اے امیر احمد علی نے بتایا کہ سروس کی سہولت کے لیے چین سے 30 بسیں بیڑے میں شامل کی گئی ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ کورال سے پمز تک کے راستے میں 13 بس سٹیشنز کا اضافہ دیکھا گیا، جس کا سفر چھ منٹ کا تھا۔ 

 انہوں نے کہا کہ گرین لائن پر آٹھ سٹیشنز مکمل ہو چکے ہیں جبکہ باقی چھ سٹیشنز 14 اگست تک مکمل ہو جائیں گے۔ 

 ڈیڈ مائلیج بچانے کے لیے بہارہ کہو میں ایک بس ڈپو بھی قائم کیا گیا ہے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔