وزیر اعظم شہباز شریف کا بڑی صنعتوں پر دس فیصد سپر ٹیکس لگانے کا اعلان

دس فیصد سپر ٹیکس کا اعلان

وزیر اعظم شہباز شریف نے جمعہ کو کہا کہ حکومت نے تیل، کھاد، سٹیل، چینی، آٹوموبائل اور ٹیکسٹائل سمیت بڑے پیمانے پر صنعت کاروں پر 10 فیصد سپر ٹیکس عائد کرنے کا اعلان کیا ہے۔ 

 وزیراعظم نے یہ اعلان اپنی اقتصادی ٹیم کے اجلاس کی صدارت کے بعد کیا جس میں بجٹ 2022-23 سے متعلق اہم فیصلے کیے گئے۔ 

 ٹیلی ویژن پر خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ وہ معیشت کے استحکام کے لیے حکومتی اقدامات پر قوم کو اعتماد میں لینا چاہتے ہیں۔ 

حکومت کی طرف سے کیے گئے فیصلوں کا مقصد ریکارڈ مہنگائی کی وجہ سے عوام کو ریلیف فراہم کرنا

 وزیر اعظم نے کہا کہ حکومت کی طرف سے کیے گئے فیصلوں کا مقصد ریکارڈ مہنگائی کی وجہ سے عوام کو ریلیف فراہم کرنا اور گرتی ہوئی معیشت کو بحال کرنا ہے جو پی ٹی آئی حکومت کی “نااہلی اور کرپشن” کی وجہ سے بکھر گئی تھی۔ 

وزیر اعظم نے کہا کہ وہ کرپشن کا لفظ استعمال کر رہے ہیں کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ پچھلی حکومت “کرپشن میں ملوث” تھی۔ 

 انہوں نے کہا کہ معیشت جو کہ پی ٹی آئی حکومت کے تاخیری حربوں کی وجہ سے دیوالیہ پن کے دہانے پر تھی، اب بچ گئی ہے اور سائے سے نکل کر ترقی کی راہ پر گامزن ہو گی۔

 حکومت اپنی سیاست کی قیمت پر یہ اقدامات کر رہی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ان کے پاس دو راستے تھے اور ملک کو بچانے کا فیصلہ کیا۔

یہ بھی پڑھیں | کالعدم ٹی ٹی پی سے آئین کے دائرے میں رہ کر بات ہو رہی ہے، رانا ثناء اللہ کی تصدیق

یہ بھی پڑھیں | پاکستان: چائنہ کے ساتھ 2.3 بلین ڈالر قرض کی ڈیل ہو گئی   

وزیر اعظم نے معاشرے کے متمول طبقوں پر زور دیا کہ وہ آگے آئیں اور بوجھ بانٹیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ یہ پہلا بجٹ ہے جس میں حکومت نے ایک “معاشی وژن” دیا ہے، قوم کو آنے والے مشکل وقت سے خبردار کیا ہے۔ 

 انہوں نے سیمنٹ، اسٹیل، چینی، تیل و گیس، کھاد، بینکنگ، ٹیکسٹائل، کیمیکل، مشروبات اور آٹوموبائل انڈسٹری پر 10 فیصد سپر ٹیکس لگانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ یہ عام آدمی کو ٹیکسوں سے بچانے کے لیے کیا گیا ہے۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ 150 ملین روپے سے زیادہ کمانے والوں پر 1 فیصد، 200 روپے سے زیادہ کمانے والوں پر 2 فیصد، 250 ملین روپے سے زیادہ کمانے والوں پر 3 فیصد اور 300 ملین روپے سے زیادہ کمانے والوں پر 4 فیصد ٹیکس عائد کیا گیا ہے۔ 

وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا کہ انہوں نے ریاستی اداروں کے اعضاء اور ڈیجیٹل ذرائع سے ٹیکس وصولی کو بڑھانے کے لیے ٹیمیں تشکیل دی ہیں۔ 

انہوں نے کہا کہ فارمل سیکٹر کا 60 فیصد ٹیکس ادا کر رہا ہے تاہم باقی 40 فیصد معیشت کو ٹیکس نیٹ میں لانے کی ضرورت ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ جمع شدہ ٹیکس کو صحت، تعلیم، ہنر مندوں کی تربیت اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے منصوبوں کی طرف موڑ دیا جائے گا۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔