“نواز شریف لندن میں رہ کر ورکرز سے احتجاج کروانا چاہتے ہیں”

ایسے وقت میں کہ جب اپوزیشن جماعتوں نے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے ذریعے حکومت پر دباؤ دالنا شروع کیا ہے تو وزیر اعظم عمران خان بھی نواز شریف اور اس اتحاد کے خلاف سامنے آ کھڑے ہوئے ہیں۔ 

تفصیلات کے مطابق جمعہ کو انصاف لائرز فورم سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) حکومت مخالف تحریک کے لئے حمایت حاصل کرنے کے لئے اپنے حامیوں کو رقم فراہم کررہی ہے۔ انہوں نے حزب اختلاف کی جماعتوں پر بھی اتحاد کرنے پر تنقید کی۔ 

انہوں نے کہا کہ میں ان کے حامیوں سے کہنا چاہتا ہوں کہ وہ پیسہ لیں لیکن اندر ہی رہیں یعنی احتجاج کرنے کے لئے باہر مت نکلیں۔ 

 وزیراعظم نے نواز شریف اور مریم نواز کے ترجمان محمد زبیر پر نواز شریف کا ایرانی رہنما آیت اللہ خمینی سے موازنہ کرنے پر بھی تنقید کی۔ وزیر اعظم عمران نے کہا کہ میں ٹی وی دیکھ رہا تھا اور وہ ایک ٹاک شو کے دوران نواز شریف کا موازنہ آیت اللہ خمینی سے کررہے تھے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ وہ یہ کہہ رہے تھے کہ خمینی کو بھی جلاوطن کردیا گیا تھا۔ انہوں نے یہ بات نوٹ کرتے ہوئے کہا کہ خمینی کو بندوق کی نوک پر بیرون ملک بھیجا گیا تھا جبکہ نواز نے ایسا کرنے کے لئے متعدد بیماریوں کا “جعلی بہانہ” بنایا تھا۔

 اس متعلق وزیر اعظم نے مزید کہا کہ یہ دونوں کسی بھی حساب سے یکساں نہیں ہیں کیونکہ ایران کے عوام حقیقت میں آیت اللہ خمینی سے محبت کرتے تھے۔ انہوں نے چپکے سے کہا کہ آیت اللہ خمینی کو لاہور سے ہیلی کاپٹروں پر نحاری نہیں لایا گیا تھا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ وہ دہی اور روٹی کی معمولی غذا پر رہتے تھے۔ 

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ نواز شریف کی ہمیشہ فوجی قیادت سے پریشانیوں کی اصل وجہ یہ ہے کہ وہ ان کے جرائم کے بارے میں جانتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ آئی ایس آئی کو کنٹرول کرنا چاہتا ہے کیونکہ آئی ایس آئی اس کی بدعنوانی کے بارے میں جانتی ہے۔ وہ دنیا کی نمبر ون ایجنسی ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ نواز شریف ہر آرمی چیف سے لڑتے ہیں – وہ پاکستان آرمی کو پنجاب پولیس میں تبدیل کرنا چاہتے ہیں۔ وزیر اعظم نے کہا کہ دوسری طرف ، وہ مسلح افواج کے ساتھ اچھے تعلقات سے لطف اندوز ہیں کیونکہ خفیہ ایجنسی ان کے طرز زندگی کے بارے میں جانتی ہے۔

 عمران خان نے مزید کہا کہ حزب اختلاف کا مسئلہ جمہوریت نہیں ہے۔ میں جمہوریت ہوں۔ میں پانچ حلقوں سے منتخب ہوا ہوں۔ جس دن انہیں این آر او مل جائے گا ، میں آپ کو بتا رہا ہوں کہپاکستان نیچے جائے گا اور اگر انہیں این آر او دیا جانا چاہئے تو پھر ہم کیوں جیل میں قید غریب عوام کے ساتھ وہی سلوک نہیں کر سکتے ہیں۔

وزیر اعظم نے وعدہ کیا کہ اپوزیشن کو ریلیاں نکالنے کی اجازت دی جائے گی ، لیکن قانون کو توڑنے کی اجازت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں آپ کو یہ واضح کر رہا ہوں  آپ جتنے جلدی چاہیں جلسے ریلیاں منعقد کرسکتے ہیں  لیکن جہاں بھی آپ قانون توڑیں گے ، آپ کو جیل بھیجا جائے گا۔

وزیر اعظم عمران خان نے مزید کہا کہ نواز شریف خود لندن میں ہیں اور وہ چاہتے ہیں کہ ان کے کارکنان پاکستان میں احتجاج کریں۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *