نواز شریف اور زرداری اپنی مرضی کا نیا آرمی چیف چاہتے ہیں، عمران خان

اپنی پسند کا آرمی چیف مقرر کرنا چاہتے ہیں

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے اتوار کے روز الزام لگایا کہ نواز شریف اور آصف زرداری اپنی پسند کا آرمی چیف مقرر کرنا چاہتے ہیں کیونکہ اگر کوئی ’’مضبوط اور محب وطن آرمی چیف‘‘ آیا تو وہ ان کی مرضی کے مطابق ہوں گے جو ان کی لوٹ مار کے بارے میں پوچھ گچھ کریں گے۔

 فیصل آباد کے اقبال اسٹیڈیم میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نے حکمران اتحاد سے سوال کیا کہ وہ نئے انتخابات سے کیوں ڈرتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایسا اس لیے ہوا کہ وہ جانتے تھے کہ شفاف انتخابات میں ان کا خاتمہ ہو جائے گا۔ 

 دوسری وجہ یہ ہے کہ نئے آرمی چیف نومبر میں آ رہے ہیں۔ زرداری اور نواز اپنے پسندیدہ کو اگلے آرمی چیف کے طور پر لانا چاہتے ہیں کیونکہ انہوں نے عوام کا پیسہ چوری کیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ انہیں ڈر ہے کہ جب محب وطن آرمی چیف آئے گا تو وہ ان سے ان کی لوٹ مار کے بارے میں پوچھیں گے۔ 

عوام کے پیسے کو بیرون ملک منتقل کرنے میں ملوث

 “امپورٹڈ حکومت” پر تنقید کرتے ہوئے، انہوں نے دعویٰ کیا کہ وزیراعظم شہباز شریف، ان کے بھائی نواز شریف اور پی پی پی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری عوام کے پیسے کو بیرون ملک منتقل کرنے میں ملوث ہیں۔

 پی ٹی آئی کے سربراہ نے کہا کہ جب ملکی برآمدات عروج پر تھیں، زرعی پیداوار ریکارڈ سطح پر تھی اور معیشت اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی تھی تو ان کی حکومت غیر ملکی سازش کے ذریعے گرائی گئی۔ 

انہوں نے مزید کہا کہ حالات اب بدل چکے ہیں کیونکہ لوگ بے روزگاری، ایندھن کی قیمت اور بجلی کے نرخوں میں اضافہ دیکھ رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | عمران خان نے سیلاب کی وجہ سے سیاسی سرگرمیاں کم کرنے کے مشورے مسترد کر دئیے

یہ بھی پڑھیں | عدالت نے عمران خان کی ضمانت میں مزید توسیع کر دی

سیلاب سے بچنے کے لیے بڑے ڈیم بنائیں گے

 پی ٹی آئی چیئرمین نے اعلان کیا کہ وہ اقتدار میں آنے کے بعد سیلاب سے بچنے کے لیے بڑے ڈیم بنائیں گے۔ 

 انہوں نے کہا کہ ان کی حکومت کا بلین ٹری سونامی پروگرام موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرے گا۔ عمران خان نے مزید اعلان کیا کہ وہ ملک کے سیلاب زدہ شہریوں کے لیے فنڈز اکٹھا کرنے کے لیے اگلے اتوار کو ایک اور بین الاقوامی ٹیلی تھون منعقد کریں گے۔ 

 انہوں نے مزید کہا کہ میں جلد ہی ایک اور ٹیلی تھون کے ذریعے سیلاب زدگان کے لیے دوبارہ اربوں روپے جمع کروں گا۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ ملک کو مستقبل میں سیلاب سے بچانے کے لیے مزید ڈیموں کی تعمیر کی ضرورت ہے۔ 

پاکستان میں موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات

 ہماری حکومت نے 50 سال بعد 10 ڈیم بنائے۔ ملک کے نکاسی آب کے نظام کو ٹھیک کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ پی ٹی آئی کی حکومت نے پاکستان میں موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات کو کم کرنے کے لیے 10 ارب درخت لگائے تھے۔ 

 سابق وزیراعظم نے کہا کہ ان کے دور حکومت میں بین الاقوامی منڈیوں میں تیل کی قیمتیں زیادہ تھیں۔ تاہم انہوں نے دعویٰ کیا کہ انہوں نے ایندھن کی قیمتیں کم رکھ کر شہریوں کو ریلیف فراہم کیا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔