نئے سال پر پنجاب حکومت کی جانب سے پابندیوں کی فہرست

پنجاب حکومت نے نئے سال کے موقع پر تہوار کی سرگرمیوں پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے جیسا کہ عوامی محافل، آتش بازی کے شو، ہوائی فائرنگ اور کسی بھی قسم کے جشن جو کہ خلل یا آلودگی کا باعث ہو۔

 یہ فیصلہ لاہور کو دنیا کا سب سے آلودہ شہر قرار دینے کے بعد سامنے آیا ہے جہاں شہریوں نے زہریلی اسموگ سے گھٹن کا شکار ہو کر حکام سے آلودگی کو کم کرنے کے لیے اقدامات کرنے کی اپیل کی ہے۔

 اس سال پنجاب کے کئی علاقوں میں سموگ بڑی تشویش کا باعث بنی ہوئی ہے جبکہ غیر صحت مند فضائی ماحول سے لاہور سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے۔ فصلوں کو جلانے، فیکٹریوں کے اخراج، گاڑیوں سے ایندھن کا اخراج، اور سرد درجہ حرارت نے پنجاب اور لاہور میں ہوا کا معیار تباہ کن سطح پر گرا دیا ہے۔ 

 لاہور میں ایفل ٹاور، بحریہ ٹاؤن کی نقل میں آتش بازی کا ایک مشہور شو منعقد کیا جاتا ہے۔ نئے سال کے موقع پر پاکستان بھر سے لوگ شو دیکھنے آتے ہیں، جس کی وجہ سے سڑکوں پر ٹریفک کا بہت زیادہ رش ہوتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | گورنمنٹ کا شہباز شریف کے خلاف ایکشن لینے کا فیصلہ

 انتظامیہ نے لوگوں کی طرف سے آتش بازی کی اجازت کے لیے کسی بھی قسم کی درخواستوں کو یکسر مسترد کر دیا ہے۔

 پابندی پاکستان میں کوویڈ19 اومیکرون کے مختلف قسم کے بارے میں بڑھتی ہوئی تشویش کی وجہ سے بھی لگائی گئی ہے۔ اس ویریئنٹ کا پہلی بار 2 ہفتے قبل کراچی میں پتہ چلا تھا اور اس کے بعد دیگر بڑے شہروں میں بھی نئے کیسز سامنے آئے ہیں۔ 

 ان تمام خدشات کی وجہ سے عوامی کنسرٹس پر بھی پابندی عائد کی گئی ہے جہاں لوگوں کو اکٹھا کیا جاتا ہے اور ٹرانسمیشن کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔ 

نئے سال کی شام کے ساتھ ساتھ چاند رات، شادیوں، یوم آزادی، یا کسی دوسرے جشن کے موقع پر بھی ہوائی فائرنگ ممنوع ہے۔ یہ پابندیاں پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن (پی ایم اے) کے ایک مطالبہ میں کی گئی ہیں جس میں مکمل پابندی کا مطالبہ کیا گیا ہے کیونکہ ہوائی فائرنگ سے متعدد زخمی اور اموات ہوتی ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں