میچ فکسنگ کی طرح بینچ فکسنگ بھی جرم ہے، مریم نواز

مخالف بینچ کو یک طرفہ فیصلے پر تنقید کا نشانہ بنایا

  مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے پیر کو کہا کہ “بینچ فکسنگ” بھی”میچ فکسنگ” جیسا ہی جرم ہے اور اس پر ازخود نوٹس لیا جانا چاہئے۔ انہوں نے مسلم لیگ (ن) کے ایک “مخصوص” مخالف بینچ کو یک طرفہ فیصلے پر تنقید کا نشانہ بنایا۔

 مریم نواز نے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری اور جے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان، وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ سمیت اتحادی حکومت کے رہنماؤں کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ اداروں کی اندر سے توہین ہوتی ہے، باہر سے نہیں۔ ایک غلط فیصلہ ایک پورا کیس اڑا دیتا ہے۔ جہاں صحیح فیصلے کیے جائیں وہاں تنقید کی ضرورت نہیں ہوتی۔

اتحادی حکومت کی طرف سے یہ دباؤ اس وقت سامنے آیا ہے جب پنجاب اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر دوست مزاری نے ق لیگ کے ووٹ مسترد کر کے ایک بار پھر حمزہ شہباز کو وزیر اعلی بنا دیا ہے جبکہ عدالت نے سوموٹو لے کر حمزہ شہباز کو ٹرسٹی وزیر اعلی قرار دیا ہے۔

 مریم نواز نے کہا ہے کہ جب سے حمزہ وزیر اعلیٰ بنے ہیں، پی ٹی آئی کے رہنما بار بار سپریم کورٹ سے رجوع کر رہے ہیں اور اس بار وہ سپریم کورٹ کی دیواریں پھلانگ گئے ہیں۔

 وزیر اعلیٰ کے 22 جولائی کے انتخاب کے خلاف پی ٹی آئی کی درخواست کا حوالہ دیتے ہوئے، مریم نواز نے کہا کہ سپریم کورٹ کے دروازے رات گئے کھولے گئے اور رجسٹرار نے پارٹی کو اپنی اپیل کا مسودہ تیار کرنے کے لیے “کافی وقت” دیا۔ 

یہ بھی پڑھیں | حمزہ شہباز نے وزیر اعلی پنجاب کی حیثیت سے دوبارہ حلف اٹھا لیا

یہ بھی پڑھیں | حمزہ شہباز وزیر اعلی برقرار، تحریک انصاف کا سپریم کورٹ جانے کا فیصلہ

انہوں نے کہا کہ ہمارے نظام انصاف میں ایسا نہیں ہوتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی کو رجسٹرار کی طرف سے اپنی پٹیشن کا مسودہ تیار کرنے کے لیے کافی وقت دیا گیا تھا، جب کہ عام آدمی کو سماعت کی تاریخ کے لیے مہینوں کا وقت دیا جاتا ہے۔ ۔

حمزہ شہباز کے منتخب ہونے پر عدلیہ نے مداخلت کی ہے۔ انہوں نے سوال کیا کہ سپریم کورٹ نے قومی اسمبلی کے سابق ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری کو آئین کی خلاف ورزی کرنے پر کیوں نہیں بلایا۔

 تفصیلی فیصلے میں، سپریم کورٹ نے نوٹ کیا تھا کہ صدر عارف علوی، اس وقت کے وزیراعظم عمران خان، اس وقت کے قومی اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکر سوری اور اس وقت کے وزیر قانون فواد چوہدری نے 3 اپریل کو عدم اعتماد ووٹ مسترد کر کے اپنے اختیارات اور آئین کی خلاف ورزی کی تھی۔ 

مریم نواز نے سوال کیا کہ عدالت نے پنجاب اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر کو عدالت میں بلایا تو اس نے قاسم سوری کو موقف پر کیوں نہیں بلایا؟”

 ‘کیا سوموٹس صرف ن لیگ اور اس کے اتحادیوں کے لیے ہیں؟’ 

مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز نے کہا کہ جب پارٹی سربراہ کی تبدیلی ہوتی ہے تو آئین کی عدالت کی تشریح بدل جاتی ہے، عمران خان اور مسلم لیگ (ن) کے سربراہ نواز شریف کے فیصلے مختلف ہوتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں