منکی پاکس: حکومت نے ہائی الرٹ جاری کر دیا

حکومت نے تمام صوبائی اور قومی محکمہ صحت کو خصوصی ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ منکی پاکس کے کسی بھی مشتبہ کیس کے بارے میں انتہائی چوکس رہیں۔ اس حوالے سے حکومت نے ہائی الرٹ کر دیا ہے۔

ریڈیو پاکستان کی رپورٹ کے مطابق، وزارت قومی صحت کی خدمات کے ایک اہلکار کے مطابق، صحت حکام صورتحال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں۔

اہلکار کا کہنا تھا کہ پاکستان میں منکی پیکس کیس کے حوالے سے سوشل میڈیا پر پھیلائی گئی معلومات درست نہیں ہیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ نیشنل ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق پاکستان میں اب تک مونکی پیکس کا کوئی کیس سامنے نہیں آیا۔ 

 نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ (این آئی ایچ) کی طرف سے جاری کردہ الرٹ میں کہا گیا ہے کہ مونکی پیکس ایک زونوٹک بیماری ہے جو انفیکشن کی وجہ سے ہوتی ہے۔

 اس وائرس کا ابھی تک کوئی خاص علاج نہیں ہے، لیکن چیچک سے بچاؤ کے لیے بنائی گئی ایک ویکسین تقریباً 85 فیصد موثر ثابت ہوئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | اسلام آباد ہائیکورٹ نے اٹارنی جنرل سے صدر کے اختیارات پر وضاحت طلب کر لی

 ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) نے مونکی پوکس سے متاثرہ ممالک میں مریضوں کو چکن پاکس کی ویکسین دینا شروع کر دی ہے تاکہ ان کا علاج کیا جا سکے۔ 

 یہ بیماری عام طور پر دو سے چار ہفتوں تک رہتی ہے۔ مونکی پوکس وائرس کی علامات کا آغاز عام طور پر سات سے چودہ دن ہوتا ہے، لیکن یہ پانچ سے اکیس دن تک ہو سکتا ہے۔

 بیماری کی علامات میں لیمفاڈینوپیتھی، تھکاوٹ، درد، پٹھوں میں درد اور سر درد شامل ہیں۔ بخار شروع ہونے کے 3 دن کے اندر، مریض کو خارش ہوتی ہے، جو اکثر چہرے سے شروع ہوتی ہے اور جسم کے دوسرے حصوں میں پھیل جاتی ہے۔ 

 طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ منکی پاکس وائرس ناک یا منہ، آنکھوں، سانس کی نالی اور یا پھٹی ہوئی جلد کے ذریعے جسم میں داخل ہوتا ہے۔ 

 سائنسدانوں کو ابھی تک منکی پاکس کی  اصلیت کا علم نہیں ہے لیکن اس طرح کے نقصان دہ وائرس بندروں اور افریقی چوہوں میں موجود ہو سکتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں