مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

تبصرے

    مجھے بلیک میل مت کرو، وزیر اعظم نے ہزارہ برادری کو خبردار کر دیا

    وزیر اعظم عمران خان نے آج جمعہ کے روز ایک بار پھر ہزارہ برادری سے اپیل کی ہے کہ وہ بلوچستان کے مچھ کے علاقے میں حملے میں ہلاک ہونے والے افراد کی تدفین کریں اور ان سے مطالبہ کیا کہ وہ وزیر اعظم کو بلیک میل کرنے سے باز رہیں۔

     اسلام آباد میں اسپیشل ٹکنالوجی زونز اتھارٹی کی لانچنگ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت نے مظاہرین کو یقین دہانی کرائی تھی کہ انہیں معاوضہ دیا جائے گا۔ ہم نے ان کے تمام مطالبات کو قبول کر لیا ہے۔ لیکن ان کا ایک مطالبہ یہ ہے کہ جب وزیر اعظم دھرنے کا دورہ کریں گے تو ان کو دفن کیا جائے گا۔ 

    میں نے انھیں یہ پیغام بھیجا ہے کہ جب آپ کے سارے مطالبات تسلیم کرلیے گئے ہیں تو پھر آپ اس طرح کسی بھی ملک کے وزیر اعظم کو بلیک میل نا کریں۔

     انہوں نے کہا کہ اس کے بعد اس طرح کوئی بھی وزیر اعظم کو بلیک میل کرے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس میں پاکستان ڈیموٹریٹک تحریک کے بھی بدمعاشوں کا گروہ  ہے۔ یہ بلیک میل بھی ڈھائی سال سے جاری ہے۔

    یہ بھی پڑھیں | ہزارہ برادری نے اپنے شہداء کو دفنانے سے انکار کر دیا، احتجاج جاری

     وزیر اعظم نے کہا کہ مظاہرین کو مطلع کیا گیا تھا کہ ایک بار جب وہ حملے میں جاں بحق ہونے والوں کو دفن کردیں گے تو وہ دورہ کریں گے۔ میں اس پلیٹ فارم کے زریعے کہہ رہا ہوں کہ اگر آپ آج انہیں دفن کرتے ہیں تو ، میں جاں بحق افراد کے اہل خانہ سے ملنے کوئٹہ جاؤں گا۔ یہ بات واضح ہے۔ آپ کے سارے مطالبات پورے ہوچکے ہیں لیکن آپ کوئی شرط نہیں لگا سکتے جس کی کوئی منطق نہیں ہے۔ لہذا پہلے ، مرنے والوں کو دفن کردیں۔ اگر آپ آج یہ کام کرتے ہیں تو میں آپ کی ضمانت دیتا ہوں کہ میں کوئٹہ آؤں گا

    آج وزیر اعظم عمران کے یہ بیان اس وقر تبصرے میں آئے جب بلوچستان کے شیعہ ہزارہ برادری نے ہفتے کے آخر میں بے دردی سے مارے گئے افراد کو دفنانے سے انکار کرتے ہوئے جمعہ کے روز چھٹے دن بھی اپنا احتجاج جاری رکھا۔

    یاد رہے کہ  اتوار کے روز مسلح حملہ آوروں نے بلوچستان کے مچھ کوئلہ فیلڈ کے علاقے میں ایک کان سائٹ کے قریب رہائشی کمپاؤنڈ میں 11 کان کنوں کے گلے کاٹ ڈالے تھے جس نے پورے واقعے کو فلمایا اور دہشتگردوں نے اسے بعد میں اسے آن لائن پوسٹ کیا۔ اس بھیانک حملے کی ذمہ داری عسکریت پسند اسلامک اسٹیٹ گروپ نے قبول کی تھی۔

     اس کے بعد سے  ہزاروں افراد نے کوئٹہ کے مغربی بائی پاس علاقے میں کان کنوں کی لاشوں پر مشتمل تابوت کے ساتھ  احتجاج کیا  جبکہ اس برادری کے ممبران نے ملک کے دیگر شہروں میں بھی مظاہرے کیے ہیں۔

    جاویریہ حارث

    جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

    سبسکرائب
    کو مطلع کریں
    guest
    0 Comments
    Inline Feedbacks
    View all comments
    0
    آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
    ()
    x