فیصل واوڈا کی تاحیات نااہلی کا فیصلہ سپریم کورٹ میں چیلنج

پی ٹی آئی رہنما اور سابق وفاقی وزیر فیصل واوڈا نے اپنی تاحیات نااہلی اور اسے برقرار رکھنے کے اسلام آباد ہائی کورٹ کے حکم کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرتے ہوئے سینیٹر کی نشست پر بحال کرنے کی درخواست کی ہے۔ 

فیصل واوڈا، جنہیں حال ہی میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے تاحیات قانون ساز کے طور پر نااہل قرار دیا تھا، نے کمیشن کے فیصلے کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں چیلنج کیا تھا، جس میں ان کی تاحیات نااہلی کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا تاہم ہائی کورٹ نے ان کی درخواست کو مسترد کر دیا۔ 

 پی ٹی آئی رہنما نے ای سی پی اور ان شکایت کنندگان کو نامزد کیا ہے جنہوں نے بطور قانون ساز ان کے انتخاب کو عدالت عظمیٰ کی درخواست میں مدعا علیہ کے طور پر چیلنج کیا تھا۔ انہوں نے کہا ہے کہ انہوں نے الیکشن کمیشن سے کوئی تفصیلات نہیں چھپائی ہیں۔ 

ای سی پی نے اپنے اختیار سے تجاوز کیا ہے اور ای سی پی کے پاس آئین کے آرٹیکل 62(1)(ایف) کے تحت مجھے تاحیات نااہل قرار دینے کے دائرہ کار کا فقدان تھا کیونکہ یہ عدالت نہیں تھی۔ انہوں نے پٹیشن میں دلائل دیتے ہوئے مزید کہا کہ اس نے پیدائشی طور پر امریکی شہریت حاصل کی ہے۔

 فیصل واوڈا نے ای سی پی اور اسلام آباد ہائی کورٹ کے فیصلوں کو کالعدم قرار دے کر سینیٹر کی نشست پر اپنی بحالی کا مطالبہ کیا ہے۔ 

 اسلام آباد ہائی کورٹ نے جمعرات کو سابق وفاقی وزیر فیصل واوڈا کی تاحیات نااہلی کو کالعدم قرار دینے کی درخواست کو مسترد کر دیا تھا۔

 اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ عدالت اپنے آپ کو یہ باور کرانے میں کامیاب نہیں ہو سکی کہ 09-02-2022 کا غیر قانونی حکم کسی قانونی کمزوری کا شکار ہے جس میں مداخلت کی ضرورت ہے۔ 

 جسٹس من اللہ نے کہا کہ پارلیمنٹ کا رکن بننے کی تاریخ وہ تاریخ تھی جب کاغذات نامزدگی داخل کیے گئے تھے۔ 

جج نے نوٹ کیا کہ غیر ملکی شہریت چھوڑنے کا عمل مکمل ہو جانا چاہیے تھا اور کاغذات نامزدگی جمع کرانے سے پہلے ختم ہو جانا چاہیے تھا۔

یہ بھی پڑھیں | مینار پاکستان واقعہ: کیا واقعی عائشہ اکرم اور ریمبو بھاری رقم بٹور چکے ہیں؟   

اسلام آباد ہائی کورٹ نے نوٹ کیا کہ یہ درحقیقت ایک طے شدہ قانون ہے کہ جب پاکستان کا کوئی شہری کسی غیر ملکی ریاست کی شہریت حاصل کر لیتا ہے، تو مؤخر الذکر منتخب ہونے یا منتخب ہونے یا پارلیمنٹ کا رکن بننے کا اہل نہیں ہو گا جب تک کہ ایسا قانونی نہ ہو۔ 

 جج نے کہا کہ درخواست گزار نے 2018 میں ہونے والے عام انتخابات میں این اے 249، کراچی سے الیکشن لڑا تھا۔ ان کے بطور رکن قومی اسمبلی کے نوٹیفکیشن کو اسلام آباد ہائی کورٹ سمیت مختلف فورمز میں چیلنج کیا گیا تھا۔ 

فیصل واوڈا کے خلاف درخواستوں میں الزام لگایا گیا تھا کہ انہوں نے ایم این اے منتخب ہونے کے لیے جھوٹا حلف نامہ جمع کروایا تھا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں