مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

فیسبک کے پانچ سو ملین سے زائد صارفین کا ڈیٹا لیک

ہفتہ کے روز ایک نجی ویب سائٹ نے فیس بک صارفین کے لاکھوں صارفین کے فون نمبر اور ذاتی ڈیٹا شائع کیا ہے جس سے فیسبک کی پرائیوسی پر بڑا سوال اٹھ گیا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق ان اعداد و شمار میں 106 ممالک کے 533 ملین سے زیادہ فیس بک صارفین کی ذاتی معلومات شامل ہیں جس میں امریکہ میں  سے 32 ملین سے زیادہ صارفین کا ریکارڈ ، برطانیہ میں 11 ملین ، اور ہندوستان میں 6 ملین صارفین شامل ہیں۔

 اس لیک شدہ معلومات میں ان کے فون نمبرز ، فیس بک آئی ڈی ، پورے نام ، مقامات ، تاریخ پیدائش ، بائیوس ، اور  کچھ کیسز میں ای میل ایڈریس بھی شامل ہیں۔

 زرائع نے لیک ہونے والے ڈیٹا کے نمونے کا جائزہ لیا اور معلوم شدہ فیس بک صارفین کے فون نمبروں کو ڈیٹا سیٹ میں درج آئی ڈی کے ساتھ مماثل کرکے متعدد ریکارڈوں کی تصدیق کی۔

یہ بھی پڑھیں | واٹس ایپ جلد پیسے ٹرانسفر کرنے کی سہولت دوبارہ شروع کرے گی

  فیس بک کے ایک ترجمان نے بتایا کہ اس خطرے کی وجہ سے ڈیٹا کو ختم کردیا گیا تھا جس کو کمپنی نے سن 2019 میں بنایا تھا۔ سائبر کرائم انٹلیجنس فرم ہڈسن راک کے سی ٹی او ایلون گال کے مطابق ، یہ ڈیٹا کچھ سال پرانا ہے ، ان میں سے اعدادوشمار سائبر کرائم کرنے والوں کو قیمتی معلومات مہیا کرسکتا ہے جو لوگوں کی ذاتی معلومات کو استعمال کرتے ہیں۔ 

زرائع کے مطابق فیس بک کے بہت سارے صارفین کے فون نمبرز ہیکنگ کی کوششوں کو سرانجام دینے کے لئے مددگار ثابت ہو سکتے ہیں۔

 سب سے پہلے جنوری میں اس لیک کوائف کا انکشاف اس وقت ہوا جب اسی ہیکنگ فورم کے صارف نے ایک پوسٹر کی تشہیر کی تھی جس میں دعوی کیا گیا تھا کہ قیمت کے عوض سیکڑوں لاکھوں فیس بک صارفین کو فون نمبر فراہم کرسکتی ہے۔ مدر بورڈ نے اس وقت اس بوٹ کے وجود کی اطلاع دی تھی اور تصدیق کی تھی کہ ڈیٹا درست ہے۔ 

اب ، ہیکنگ فورم پر پورا ڈیٹاسیٹ مفت میں پوسٹ کیا گیا ہے ، جس سے اعداد و شمار کی ابتدائی مہارت والے ہر فرد کو یہ وسیع پیمانے پر دستیاب ہے۔

 یاد رہے کہ یہ پہلا موقع نہیں جب فیس بک صارفین کے بہت سارے فون نمبروں کو آن لائن لیک ہوتے ہوئے پایا گیا ہے۔ اس سے پہلے 2019 اور 2016 میں بھی ایسے اقدام سامنے آ چکے ہیں۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔