عمران خان کا علماء کرام کو کرپشن کے خلاف آواز اٹھانے کا مشورہ

وزیر اعظم عمران خان نے پیر کے روز “بدعنوان” سابقہ ​​حکمرانوں کو کسی بھی قومی مفاہمت آرڈیننس جیسی رعایت نہ دینے کے عزم کا اظہار کیا اور مذہبی رہنماؤں اور علمائے کرام سے گزارش کی کہ وہ مساجد کے ذریعہ لوگوں کو کرپشن سے متعلق تعلیم دیں تاکہ انھیں اچھے اور برے میں فرق کرنے میں مدد ملے۔

 وزیر اعظم نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں چاہتا ہوں کہ آپ لوگوں کو بتائیں کہ حقیقت میں ریاست مدینہ کیا تھی اور انھیں صفائی اپنانے کی تعلیم دیں۔ انہیں سچائی  سکھائیں اور یہ کہ انہیں بھی متحد ہونا چاہئے کیونکہ ریاست مدینہ میں مسلمان متحد ہو گئے تھے۔ 

علمائے کرام اور مشائخ کانفرنس میں انہوں نے ریمارکس دیئے کہ یہ کیسے ممکن ہے کہ چھوٹے موٹے جرائم میں ملوث لوگوں کو جیلوں میں ڈالا جائے اور اربوں لوٹنے والوں کو این آر او دیا جائے۔

عمران خان نے کہا کہ ان کی حکومت کا مقصد لوگوں کو اچھے اور برے کے درمیان فرق کے بارے میں حساس بنانا ہے کیونکہ اس صفت کی کمی کسی بھی قوم کے زوال کا باعث بن سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس مقصد کو حاصل کرنے میں حکومت کو دشواری کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں | مریم نواز کی بیٹی کی حادثے کا شکار ہونے کے بعد سرجری

 انہوں نے مزید کہا کہ یہ بدقسمتی ہے کہ اس ملک کے لوگوں کے لئے صحیح اور غلط کے درمیان فرق کم ہوتا جارہا ہے۔ ایک قوم اس وقت مر جاتی ہے جب وہ اچھے اور برے میں فرق کرنے میں ناکام ہوجاتی ہے۔ 

وزیر اعظم خان نے علماء کانفرنس میں کہا کہ تقریبا آٹھ سے نو ٹی وی اینکروں نے حزب اختلاف پاکستان مسلم لیگ نواز کے سپریم لیڈر نواز شریف کی تقریر نشر کرنے کی اجازت طلب کرنے کے لئے حال ہی میں عدالت سے رجوع کیا تھا جسے اربوں کی عوام کی رقم چوری کرنے کے الزام میں سزا سنائی گئی تھی۔ انہوں نے کہا کہ اگر یہ کسی مغربی ملک میں ہوتا تو ایسا شخص کسی بھی سماجی اجتماع میں قابل قبول نہ ہوتا ، ٹی وی چینلز پر آنے کی تو بات ہی اور ہے۔

 وزیر اعظم نے کہا کہ معاشرتی تبدیلی اسی وقت ممکن ہے جب ایس ایچ او یا پٹواری رشوت لینے کی وجہ سے ’معاشرتی شرمندگی‘ سے خوفزدہ ہوں گے۔

 انہوں نے کہا کہ دینی علما کو اس کو اپنے خطبات کا حصہ بنانا چاہئے۔ انہوں نے ان پر زور دیا کہ وہ پاکستان کے “فکری انقلاب” میں اپنا کردار ادا کریں تاکہ یہ ملک بہتر ہو۔ انہوں نے کہا کہ بحیثیت ملک پاکستان ہم اپنے نظریات سے بالکل دور ہے۔ 

 انہوں نے کہا کہ عوام کو ان رہنما اصولوں کے بارے میں آگاہ کیا جانا چاہئے جنہوں نے پسماندہ معاشرے کو 15 سے 20 سالوں میں اس وقت کی سب سے بڑی سلطنتوں کو شکست دینے کے لئے تقویت بخشی ہے۔ 

عمران خان نے کہا کہ اپنی دانشمندی کے ذریعہ ، پیغمبر اکرم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ایک منقسم معاشرے کو متحد کیا تھا اسی طرح ملک میں ہم آہنگی لانے کے لئے علمائے کرام کو بھی کردار ادا کرنا چاہئے۔ 

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

سبسکرائب
کو مطلع کریں
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
آپ اس متعلق کیا کہتے ہیں؟ اپنی رائے کمنٹ کریںx
()
x