عدالتی فیصلہ: والدین کو دعا زہرہ مل گئی

دعا زہرہ والدین کے حوالے کر دی گئی

سندھ ہائی کورٹ نے جمعہ کو مبینہ اغوا کیس میں دعا زہرہ کو عارضی طور پر اس کے والدین کے حوالے کر دیا ہے۔ 

سندھ ہائی کورٹ میں دعا زہرہ کے مبینہ اغوا سے متعلق کیس میں والدین کی جانب سے تحویل سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔ سماعت کے دوران ظہیر احمد کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ یہ درخواست ناقابل سماعت ہے اور جوڈیشل مجسٹریٹ لڑکی کی تحویل سے متعلق درخواست پہلے ہی مسترد کر چکے ہیں۔ انہوں نے استدعا کی کہ درخواست ٹرائل کورٹ میں بھی زیر التوا ہے اور درخواست گزار کے پاس اب بھی متعلقہ فورم موجود ہے۔ 

ظہیر کو بھی لڑکی سے ملنے کی اجازت ہونی چاہیے

 ظہیر احمد کے وکیل نے مزید کہا کہ درخواست گزار کو ٹرائل کورٹ سے رجوع کرنا چاہیے کیونکہ لڑکی کو عدالتی احکامات پر شیلٹر ہوم بھیج دیا گیا تھا اور اسے حراست میں نہیں رکھا گیا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ وہ اس کیس کی اہم گواہ تھے۔ انہوں نے کہا کہ والدین نے لڑکی سے پانچ ملاقاتیں کیں اور انہوں نے اس سے پوچھا کہ وہ گھر جانا چاہتی ہے یا نہیں۔ اس معاملے میں ظہیر کو بھی لڑکی سے ملنے کی اجازت ہونی چاہیے۔

یہ بھی پڑھیں | راولپنڈی، اسلام آباد میں آٹے کی قیمتوں میں اضافہ

یہ بھی پڑھیں | نئے سال کی آمد پر اسلام آباد میں اہم مقامات بند کرنے کا فیصلہ

 جسٹس اقبال کلہوڑو نے لڑکی کو بلایا اور اس کا نام پوچھا جس پر اس نے جواب دیا کہ میرا نام دعا زہرہ ہے۔ میں ساتویں جماعت میں پڑھتی تھی۔ میرے والدین اور بہن عدالت میں موجود ہیں اور میں اپنی فیملی کے ساتھ جانا چاہتی ہوں۔

 ظہیر کے وکیل نے استدعا کی کہ بچی کو باہر لے جانے سے روکا جائے۔ جج نے جواب دیا کہ وہ اپنے والدین کے گھر جانا چاہتی ہے۔ کوئی بھی اپنے والدین کا گھر نہیں چھوڑنا چاہتا اور ہماری عدالت سب کے لیے کھلی ہے۔ لڑکی جوان ہے اور وہ کسی شیلٹر ہوم میں نہیں جانا چاہتی۔

دعا زہرہ کی مستقل حوالگی کا فیصلہ ٹرائل کورٹ کرے گی

 عدالت نے لڑکی کے والد مہدی کاظمی سے پوچھا کہ وہ عدالت میں کیا ضمانت دیں گے؟ عدالت نے لڑکی کی والدہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ہم لڑکی کو آپ کے حوالے کر رہے ہیں اور اب آپ کے کندھوں پر بہت بڑی ذمہ داری ہے۔ 

سندھ ہائی کورٹ نے لڑکی کو عارضی طور پر والدین کے ساتھ جانے کی اجازت دیتے ہوئے کہا کہ بچی کی مستقل حوالگی کا فیصلہ ٹرائل کورٹ کرے گی۔

زرين

زین ایک ایوارڈ یافتہ سابق شکاگو سٹی ہال کے سیاسی رپورٹر اور کالم نگار ہیں۔