شہباز شریف کی حکومت سے پی ٹی آئی کو مائنس کر کے پانچ سال پورے کرنے کی تجویز

قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اور پی ایم ایل این کے صدر شہباز شریف نے پی ٹی آئی کو چھوڑ کر پانچ سال کے لیے قومی حکومت بنانے کی تجویز دی ہے۔ 

 یہ بات انہوں نے جیو نیوز کے پروگرام ’’کیپٹل ٹاک‘‘ کے اینکر حامد میر کو انٹرویو دیتے ہوئے کہی۔ 

شہباز شریف اس منظر نامے کے بارے میں سوال کا جواب دے رہے تھے کہ کیا تحریک عدم اعتماد کامیاب ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی ایم ایل این کا خیال ہے کہ نئے انتخابات ہونے چاہئیں لیکن اس کے لیے دیگر جماعتوں سے مشاورت کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں پی ٹی آئی کو چھوڑ کر پانچ سال کے لیے قومی حکومت بنانے کی تجویز پیش کرتا ہوں۔

یہ بھی پڑھیں | تحریک عدم اعتماد غیر ملکی سازش نہیں تین سالہ محنت ہے؛ بلاول بھٹو نے ‘کانپیں ٹانگنے’ کا مطلب سمجھا دیا   

 شہباز شریف نے کہا کہ ایک وزیر لاکھوں لوگوں کو اسلام آباد لانے کی بات کر رہا ہے اور جمہوریت کو خطرہ ہے جب کہ اپوزیشن تحریک عدم اعتماد کو آئینی طور پر اپنے انجام تک پہنچانا چاہتی ہے۔ شہباز شریف نے خبردار کیا کہ اگر حکومت اپنے (تصادم کے) طریقوں پر قائم رہی تو جمہوریت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا۔ 

 آئی ایم ایف کے حوالے سے پی ایم ایل این کی پالیسی کیا ہوگی؟

 انہوں نے کہا کہ اگر پی ایم ایل این حکومت بناتی ہے تو حقائق کی بنیاد پر آئی ایم ایف سے مذاکرات کرے گی۔ 

 ہارس ٹریڈنگ کے الزامات کے بارے میں ایک سوال پر شہباز شریف نے کہا کہ جو لوگ یہ الزام لگا رہے ہیں وہ ثبوت کے ساتھ آئیں۔ کیا یہ ہارس ٹریڈنگ نہیں تھی جب پارلیمنٹیرینز کو 2018 میں بنی گالہ لے جایا جا رہا تھا، اگر عدم اعتماد کی تحریک میں پیسہ شامل ہوا تو میں اس کی ذمہ داری قبول کروں گا۔

  ان کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی کے متعدد اراکین نے ہمیں بتایا کہ وہ تین سال تک حکومت کے ساتھ رہنے کا کفارہ دینا چاہتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ عمران خان کو مسیحا سمجھتے تھے، لیکن وہ ملکی تاریخ کے بدترین حکمران نکلے۔

تحریک عدم اعتماد کے لیے 200 ارکان کی حمایت حاصل کرنے کے بارے میں بلاول بھٹو کے بیان کا خیرمقدم کرتے ہوئے شہباز شریف نے کہا کہ تعداد مکمل کرنے کے لیے حکومت کے اتحادیوں سے بات چیت جاری ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ کتنے ارکان اپوزیشن کے ساتھ ہیں اس دن تحریک پر ووٹنگ کے دن پتہ چل جائے گا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں