سیلاب: آدھے گورنمنٹ سکول بند ہیں

سندھ میں کم از کم 50 فیصد سرکاری اسکول چلنے کی پوزیشن میں نہیں ہیں۔

کراچی سمیت صوبے کے تمام 30 اضلاع میں مجموعی طور پر 4,915 اسکول سیلاب سے متاثر ہونے والے اندرونی طور پر بے گھر ہونے والے افراد کے قبضے میں ہیں۔ 

 ذرائع نے بتایا کہ محکمہ تعلیم نے ابھی تک یہ فیصلہ نہیں کیا کہ آیا یہ سکول اگلے دو ماہ میں آسانی سے چلنے کی پوزیشن میں رہیں گے یا نہیں۔

 یہ بھی پڑھیں | سیلاب کی وجہ سے معیشت 10 بلین ڈالر تک متاثر ہوئی، مفتاح اسماعیل

 یہ بھی پڑھیں | وزیر اعظم شہباز شریف سے اے آو وائی کی بندش متعلق سوال

سکول مکمل طور پر تباہ ہو چکے ہیں

 تفصیلات کے مطابق صوبے میں کل 49446 سکول ہیں۔ ان میں سے 5219 سکول مکمل طور پر تباہ ہو چکے ہیں جبکہ 10623 سکولوں کو جزوی نقصان پہنچا ہے جبکہ 4915 سکولوں کو آئی ڈی پی کیمپ کے طور پر استعمال کیا جا رہا ہے۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ طلباء اور اساتذہ کی اکثریت بھی بے گھر ہو کر اپنے گھروں کو محفوظ بنانے کے لیے چھوڑ چکی ہے۔ 

 جمعرات کو محکمہ تعلیم کے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق اسکول آج کھلنے تھے۔ ذرائع نے بتایا کہ ڈپٹی کمشنرز سے کہا گیا ہے کہ وہ رپورٹس مرتب کریں اور فیصلہ کریں کہ کون سا اسکول فعال ہوسکتا ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔