دو دن میں روپیہ نے ڈالر کے مقابلے میں 2.8 کی چھلانگ لگا لی

دو دن میں روپیہ ڈالر کے مقابلے میں 2.8 کی چھلانگ لگا کر  182.93 پر آ گیا ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سیاسی صورتحال میں بہتری آ رہی ہے۔ 

 روپے نے جمعہ کو ڈالر کے مقابلے میں 3.50 روپے کی اپنی سب سے بڑی تاریخی بحالی دیکھی جب امریکی کرنسی 188.18 روپے سے گر کر 184.68 روپے پر آ گئی۔ 

 سپریم کورٹ کے فیصلے – جس نے ہفتہ کو اس وقت کے وزیر اعظم عمران خان کے خلاف عدم اعتماد کا ووٹ لینا لازمی قرار دیا تھا – نے سیاسی بحران سے منافع کمانے والی قیاس آرائی کرنے والی قوتوں کو کم کرنے میں مدد کی۔ 

 پچھلے دو سیشنز کے دوران، روپے نے 5.20 روپے یا 2.8 فیصد کا اضافہ گرین بیک کے مقابلے میں کیا جس سے شرح تبادلہ پر دباؤ کم ہوا۔ مارچ کے آغاز سے ہی روپے کی قدر روزانہ کی بنیاد پر گر رہی تھی، جبکہ اسلام آباد میں سیاسی بحران نے قیاس آرائی کرنے والی قوتوں کو زیادہ منافع کے مارجن کے لیے جگہ حاصل کرنے کی اجازت دی۔ 

بینکرز اور کرنسی ڈیلر اصل شرح مبادلہ سے واقف نہیں ہیں جو اگلے مالی سال تک برقرار رہنا چاہیے لیکن کہا کہ یہ نئی حکومت کے تحت آنے والے مہینوں میں معیشت کی کارکردگی کی عکاسی کرے گی۔ 

اب تک صورتحال نہیں بدلی ہے۔ انٹربینک مارکیٹ میں کرنسی ڈیلر عاطف احمد نے کہا کہ ڈالر کی مانگ کا دباؤ پہلے سے موجود ہے لیکن صرف ایک چیز جو غیر موجود ہے وہ حکومت کے وجود کے بارے میں غیر یقینی صورتحال ہے۔

یہ بھی پڑھیں | انڈیا اور ترکی کی شہباز شریف کو وزیر اعظم بننے پر مبارکباد 

 بینکرز نے کہا کہ سیاسی بحران کی وجہ سے غیر یقینی صورتحال کے باوجود ترسیلات زر کی آمد متاثر نہیں ہوئی۔ مارچ کے دوران، آمد فروری کی طرح اسی سطح کے آس پاس ہوسکتی ہے۔ 

 تاہم، غیر یقینی صورتحال نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی طرف سے گھریلو بانڈز میں سرمایہ کاری کی گرم رقم کو متاثر کیا ہے۔ گزشتہ ڈیڑھ ماہ کے دوران ٹریژری بلز اور پاکستان انویسٹمنٹ بانڈز سے 300 ملین ڈالر سے زائد کی رقم نکلوائی گئی ہے۔ 

 کرنسیوں کا کاروبار کرنے والے بینکرز پر امید ہیں کہ آنے والے دنوں میں شرح مبادلہ میں استحکام آئے گا لیکن وہ اس بات پر یقین نہیں رکھتے تھے کہ نئی حکومت کب تک اقتصادی پالیسیاں یا مقامی کرنسی کو سپورٹ کرنے کے لیے قلیل مدتی فیصلے لے کر آئے گی۔ 

بیشتر تجزیہ کاروں اور محققین کا خیال ہے کہ نئی حکومت ریونیو بڑھانے کے لیے پیٹرولیم کی قیمتوں میں اضافہ کرے گی جب کہ بجلی پر دی گئی رعایتیں بھی واپس لے لی جائیں گی۔ یہ اقدامات افراط زر کو متحرک کر سکتے ہیں اور شرح مبادلہ کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں