دس لاکھ چھوڑو صرف 172 پارلیمانی ممبران پورے کر لو، عمران خان کو بلاول بھٹو کا طنز

چیئرمین پی پی پی بلاول بھٹو زرداری نے وزیر اعظم عمران خان کے خلاف ایم این اے کی ووٹنگ کی ڈبل سنچری مارنے کا دعویٰ کیا اور انہیں چیلنج کیا کہ وہ دس لاکھ کو چھوڑیں اوت 172 پارلیمانی ارکان پورے کریں۔

 جیو نیوز کے پروگرام کیپیٹل ٹاک میں سینئر صحافی حامد میر کو انٹرویو دیتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ وزیراعظم کا آصف زرداری کو نشانہ بنانے کا بیان ان کے سیاسی مخالفین کے خلاف تشدد سے کم نہیں تاہم ان کی دھمکی ناقابل برداشت اور قابل مذمت ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ وہ [عمران خان] اپنی شکست کا اندازہ لگا سکتے ہیں کیونکہ انہوں نے گالی گلوچ اور سیاسی حریفوں کو دھمکیاں دینا شروع کر دی ہیں، تاہم، انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم کو جمہوریت میں کسی کو دھمکی نہیں دینی چاہیے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ عمران خان نے ووٹنگ سے ایک روز قبل جلسے کا اعلان کرکے غیر جمہوری قدم اٹھایا کیونکہ انہیں شکست صاف نظر آرہی تھی۔

 اس لیے وہ اپنے ہی ارکان کو ووٹ ڈالنے سے روکنا چاہتے ہیں اور اسلام آباد میں محاذ آرائی کا ماحول بھی بنانا چاہتے ہیں۔ 

بلاول بھٹو نے مزید کہا کہ یہ جمہوری جنگ ہے لہٰذا سڑک پر نہیں پارلیمنٹ میں لڑیں جہاں عمران خان نے دس لاکھ نہیں بلکہ صرف 172 ارکان لانے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | شہباز شریف کی حکومت سے پی ٹی آئی کو مائنس کر کے پانچ سال پورے کرنے کی تجویز    

‘پہلے دن سے عمران خان کو چیلنج کر رہا ہوں’ 

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ وہ پہلے دن سے عمران خان کو چیلنج کر رہے تھے اور یہ بات انہیں ناراض کر رہی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیراعظم مجھ سے ناراض ہیں کہ ایک نوجوان لڑکا انہیں کیسے چیلنج کر سکتا ہے اور حکومت چلانے نہیں دے سکتا۔

 انہوں نے مزید کہا کہ میں نے انہیں اپنے دور حکومت کے پہلے ہی دن سلیکٹڈ قرار دیا تھا اور اب اس نے پوری دنیا میں اپنی شناخت برقرار رکھی ہے۔ 

 پیپلز پارٹی کے چیئرمین کا کہنا تھا کہ عمران خان آصف زرداری کو جیل میں ڈالنا چاہتے تھے، اس لیے وہ اگلے پانچ سال تک ملک پر باآسانی حکومت کر سکتے ہیں۔

 ایک سوال پر کہ اگر اپوزیشن وزیراعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد کامیاب کر لیتی ہے تو اگلا لائحہ عمل کیا ہو گا، بلاول بھٹو نے کہا کہ اگر حکومت کو ہٹایا گیا تو ہم انتخابی اصلاحات کریں گے کیونکہ ہم ملک میں شفاف انتخابات چاہتے ہیں۔ انتخابات کرانے کے لیے انتخابی اصلاحات کے بارے میں دیگر جماعتوں سے مشاورت کریں گے۔ 

بلاول بھٹو نے ایم کیو ایم پی کے ساتھ ورکنگ ریلیشن شپ منقطع کرنے کو بھی سازش قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم پی کے ساتھ مذاکرات صرف عدم اعتماد کی طرف نہیں بلکہ ورکنگ ریلیشن شپ کی طرف بھی جا رہے ہیں کیونکہ ہم ایم کیو ایم پی کے ساتھ شراکت داری کو بحال کرنا چاہتے ہیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ ایک سازش کے ذریعے ایم کیو ایم اور پیپلز پارٹی کے ورکنگ ریلیشن شپ کو نقصان پہنچایا گیا تاہم اس پارٹنرشپ کی اشد ضرورت ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔