حکومت نے کوئی وعدہ پورا نہیں کیا، اے این پی حکومت سے ناراض

اے این پی حکومت سے علیحدگی اختیار

 وزیر اعظم شہباز شریف کی قیادت میں مرکز میں متحدہ حکومت کا ایک اور اتحادی، عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی) مخلوط حکومت سے علیحدگی اختیار کرنے پر غور کر رہی ہے۔ 

 یہ فیصلہ ایمل ولی خان کی زیر صدارت اے این پی کے اجلاس میں کیا گیا جس میں پارٹی رہنماؤں نے عدم اعتماد کے ووٹ سے قبل کیے گئے وعدوں میں سے ایک بھی پورا نہ ہونے پر وفاقی حکومت چھوڑنے کا مشورہ دیا۔ 

اس حوالے سے حتمی فیصلہ کرنے کے لیے ایمل ولی خان نے عید کے بعد مرکزی قیادت کا اجلاس طلب کیا ہے۔  اے این پی کے ذرائع کا کہنا ہے کہ نہ تو ان کے ساتھ کیے گئے وعدے پورے کیے جا رہے ہیں اور نہ ہی حکومت انھیں اپنے کیے گئے فیصلوں پر اعتماد میں لے رہی ہے۔ 

27 جون کو، عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی)، جو حکمران اتحاد کا حصہ ہے، نے حکومت کو خبردار کیا کہ اگر وہ اپنی ذمہ داریاں نبھانے میں ناکام رہی تو وہ ‘تلخ’ فیصلے لے گی۔

یہ بھی پڑھیں | پی ٹی آئی کو پریڈ گراؤنڈ میں جلسہ کرنے کی اجازت مل گئی

یہ بھی پڑھیں | وزیر اعلی پنجاب کا انتخاب، الیکشن آج ہو گا 

ق ایک بیان میں اے این پی کے مرکزی سینئر نائب صدر امیر حیدر خان ہوتی نے خبردار کیا کہ اگر حکومت اپنی ذمہ داریاں نبھانے میں ناکام رہی تو پارٹی کو ’تلخ‘ فیصلے کرنے پڑیں گے۔ 

انہوں نے کہا، “ہم نے حکمران اتحاد کے ساتھ ہاتھ ملایا تاکہ منتخب حکومت سے شہریوں کی جانیں بچائی جا سکیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ حکومت کو اب ذمہ داری قبول کرنی چاہیے۔ 

 امیر حیدر خان ہوتی نے مزید کہا کہ حکومت معیشت کے استحکام اور عوام کو ریلیف دینے کے لیے فوری اقدامات کرے۔ ہم ایسی حکومت کی حمایت نہیں کریں گے جو عوام کی خدمت نہ کر سکے۔ اے این پی کو عوام کی خدمت کے لیے کسی وزارت یا عہدے کی ضرورت نہیں۔ 

اے این پی رہنما نے مزید کہا کہ اگر حکومت عوام کے مسائل حل کرنے میں سنجیدہ ہے تو قربانی کا آغاز پارلیمنٹ سے کرے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر حکومت ملک کو بحران سے نکالنے میں سنجیدہ ہے تو معاشی حالات میں مراعات اور مراعات لینا بند کر دے۔

حرمین رضا

حرمین رضا اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔