مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

حکومت اور تحریک لبیک میں مذاکرات کامیاب، فرانسیسی سفیر کی ملک بدری کی قرارداد پارلیمنٹ پیش

تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) نے منگل کو وزیر داخلہ شیخ رشید احمد کی سربراہی میں حکومتی ٹیم کے ساتھ کامیاب مذاکرات کے بعد اپنا دھرنا ختم کردیا ہے۔

 حکومتی ٹیم کے دیگر ممبران میں وزیر مذہبی امور نورالحق قادری ، وزیر اعظم کے مشیر حافظ طاہر اشرفی ، وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت اور متعلقہ عہدیدار شامل تھے۔ ٹی ایل پی کے سربراہ سعد رضوی سے بات چیت کے دوران حکومتی جماعت کی سربراہی کرنے والے شیخ رشید احمد نے منگل کی صبح ایک ٹویٹ میں اس معاہدے کو پڑھ کر سنایا۔ 

شیخ رشید نے کہا کہ یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ فرانسیسی سفیر کو ملک بدر کرنے کے معاملے کا فیصلہ کرنے کے لئے حکومت پارلیمنٹ میں ایک قرارداد پیش کرے گی۔  انہوں نے کہا کہ ٹی ایل پی کی قیادت اور کارکنوں کے خلاف مقدمات بشمول ان کے چوتھے شیڈول میں شامل کرنے اور پابندی کے خاتمے سمیت مناسب وقت پر ختم ہوجائیں گے اور ان کے زیر حراست کارکنان کو رہا کردیا جائے گا۔ 

وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری کے مطابق ، منگل کو ٹی ایل پی اور حکومت کے مابین حتمی معاہدہ ہوا جس کے بعد فرانسیسی سفیر کو واپس بھیجنا ضروری ہے یا نہیں اس پر بحث کے لئے پارلیمنٹ میں قرارداد پیش کرنے کا وعدہ پورا ہوا۔

یہ بھی پڑھیں | ٹی ایل پی کارکنوں نے لاہور پولیس سٹیشن پر دھاوا بول دیا، پولیس زرائع

 ٹی ایل پی کی طرف سے مذاکرات کی قیادت کرنے والے ڈاکٹر شفیق امینی نے اپنا احتجاج ختم کرنے کا اعلان کیا۔ اس موقع پر ٹی ایل پی شوریٰ کے ممبران بھی موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے پارلیمنٹ میں قرارداد پیش کرکے اپنے وعدے کو پورا کیا۔ اب ہمیں احتجاج کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ لاہور کے ساتھ ساتھ دیگر تمام مقامات پر بھی احتجاج بند کردیا گیا ہے۔ جیسے ہی یہ اعلان ہوا ، لاہور کے مرکزی دھرنے کے مقام کے باہر سڑکیں ٹریفک کے لئے کھول دی گئیں اور ٹی ایل پی کارکن منتشر ہونا شروع ہوگئے۔

 حکومت کو پیش کیے گئے اپنے دوسرے مطالبات کے بارے میں بات کرتے ہوئے ، امینی نے دعوی کیا کہ ان محاذوں میں “مثبت” پیشرفت بھی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی قیادت  تمام پیشرفتوں کا جائزہ لے رہی ہے۔ 

 اسی اثناء ، ایک نجی پی ٹی آئی ممبر نے فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کے خلاف احتجاج میں فرانسیسی سفیر کو ملک بدر کرنے پر بحث کا مطالبہ کرتے ہوئے قومی اسمبلی میں ایک قرارداد پیش کی۔ 

حزب اختلاف کی تجویز پر ، اسپیکر اسد قیصر نے قرارداد پر بحث بدھ (آج) تک موخر کردی۔ امجد خان نے یہ بھی مطالبہ کیا کہ تمام مغربی ممالک خصوصا فرانس کو اس معاملے کی حساسیت سے آگاہ کیا جائے۔ 

اس موقع پر مسلم لیگ (ن) اور جے یو آئی (ف) نے پارلیمنٹ میں شرکت کا فیصلہ کیا جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) نے اس پارلیمانی اجلاس کا بائیکاٹ کیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔