جرمن آٹوموبائل کمپنی فرنچائز پورش پاکستان کی دھوکہ دہی کے الزامات کی تردید

نجی نیوز کی خبر کے مطابق ، جرمن آٹوموبائل بنانے والی کمپنی کی فرنچائز پورش پاکستان نے لاہور میں ایک گاہک کی طرف سے لگائے جانے والے فراڈ کے الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ دعوے گمراہ کن اور غیر ذمہ دارانہ ہیں۔

 اس ہفتے جاری کردہ ایک بیان میں ، پورش پاکستان نے کہا ہے کہ جعلی کاروں کی بکنگ کے الزامات جھوٹے ہیں اور اس کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او) کے مطابق “

دعوے کے مطابق کوئی رقم واجب الادا نہیں ہے۔ بیان میں لکھا گیا ہے کہ پورش اے جی کی جانب سے ان کے بطور مقرر نمائندے کی حیثیت سے قانونی معاہدوں کے تحت گاڑیوں کی بکنگ کے خلاف پرفارمنس آٹوموٹو پرائیویٹ لمیٹڈ (پورش پاکستان) کو تمام ادائیگیاں موصول ہوئیں۔

 کار ڈیلر نے اپنے وضاحتی بیان میں ، پورش ای جی ، جو بنیادی کمپنی ہے ، پر یہ الزام بھی عائد کیا ہے کہ وہ اپنے پاکستانی صارفین کو دو سال سے گاڑیاں فراہم کرنے سے غیر قانونی طور پر انکار کررہا ہے اور یہ الزام لگایا کہ یہ پورش پاکستان کو دیوالیہ کرنے اور بدنام کرنے کی کوشش ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | اب اے ٹی ایم سے نقد رقم کی رسید لینے پر ٹیکس لگے گا

حتمی مقصد کاروبار کو ایک بااثر اور متنازعہ کاروباری گروپ میں منتقل کرنا تھا جس کے ساتھ پورش اے جی (پورش مشرق وسطی اور افریقہ ایف زیڈ ای) کے علاقائی دفتر کے ذریعہ پہلے سے انتظام کیا گیا تھا۔ پورش پاکستان نے مزید کہا کہ اس نے پاکستان میں دستیاب تمام فورمز پر اپنی آبائی کمپنی کو قانونی طور پر چیلنج کیا تھا۔

  دوسری طرف ، پولیس کا کہنا ہے کہ پرفارمنس آٹوموٹو پرائیوٹ لمیٹڈ کے مالک ، سید ابوذر بخاری پر پرفارمنس لمیٹڈ کے نام سے ایک سنٹر قائم کرنے ، اپنے صارفین کے لئے پورش گاڑیوں کی بکنگ کے لئے دسیوں لاکھوں روپے وصول کرنے ، اور بند کرنے کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ 

 لاہور پولیس نے مزید بتایا کہ ابوزر بخاری کے خلاف کم سے کم سات مختلف مقدمات درج ہیں۔ پورش کاریں دنیا کی مہنگی ترین کمپنیوں میں سے ایک ہیں ، جس کی قیمتیں 35 ملین سے 90 ملین روپے تک ہیں۔ لگژری گاڑیاں جدید ترین ٹکنالوجی سے آراستہ ہیں۔ 

ایک مقامی اخبار نے رپورٹ کیا کہ ابوزر بخاری کے خلاف شکایت کرنے والوں میں سے ایک میاں محمد علی معین نے جنوری 2020 میں پورش ٹکن ٹو پرفارمنس آٹوموٹو پرائیوٹ لمیٹڈ کے لئے پیشگی طور پر ادا کیے گئے 5 ملین روپے کی وصولی میں مدد کے لئے قومی احتساب بیورو (نیب) سے بھی رابطہ کیا ہے۔

 اشاعت میں پولیس کے ایک اعلی عہدیدار کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ مشتبہ شخص ملک چھوڑ کر چلا گیا ہے۔ مزید بتایا کہ لاہور پولیس نے ابوزر بخاری کی گرفتاری کے لئے وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کی مدد طلب کی ہے۔

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔