توشہ خانہ اسکینڈل اور فرح خان سے متعلق عمران خان کا موقف سامنے آ گیا

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان نے پیر کو کہا ہے کہ وزیر اعظم شہباز شریف کی قیادت میں موجودہ حکومت مسلم لیگ (ن) کے رہنما نواز شریف کے خلاف مقدمات بند کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق اے آر وائی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) میں حالیہ تبادلے اور تعیناتیاں شہباز شریف کی جانب سے اپنے اور ان کے بڑے بھائی نواز شریف کے خلاف کرپشن کے مقدمات بند کرنے کے لیے کی جانے والی “انجینئرنگ” کی طرف اشارہ کرتی ہیں۔

توشہ خانہ کے تحائف کے بارے میں مسلم لیگ (ن) اور حریف جماعت کی جانب سے توشہ خانہ سے تحائف فروخت کرنے کے الزامات کے بارے میں سابق وزیراعظم نے کہا کہ توشہ خانہ سے جو کچھ خریدا وہ ریکارڈ پر ہے اور اگر کسی کے پاس کرپشن کے ثبوت ہیں تو سامنے آئیں۔ 

عمران خان نے کہا کہ میں اللہ کا شکر ادا کرتا ہوں کہ تین سالوں میں ان کو میرے خلاف صرف یہ توشہ خانہ گفٹ سکینڈل ملا ہے جو پہلے ہی ریکارڈ پر ہے۔

یہ بھی پڑھیں | نئی وفاقی کابینہ کا اعلان آج متوقع 

انہوں نے کہا کہ وہ قانون کے مطابق ان تحائف کو خریدنے کے اپنے حق میں ٹھیک تھے اور انہوں نے درحقیقت قواعد میں تبدیلی کی اور اہلکاروں کے لیے تحفے کی قیمت کا کم از کم 50 فیصد ادا کرنا لازمی قرار دیا جو ماضی میں 25 فیصد تھا۔ 

 فرح خان کے بارے میں  جب ان سے اپنی اہلیہ کی دوست فرحت شہزادی (فرح خان) پر کرپشن کے الزامات کے بارے میں پوچھا گیا تو پی ٹی آئی کے سربراہ نے کہا کہ فرح خان کے پاس کوئی سرکاری عہدہ یا وزارت نہیں ہے اس لیے وہ حکومت یا بیوروکریسی پر کیسے اثر انداز ہو سکتی تھیں۔ مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے الزام لگایا تھا کہ بشریٰ بی بی کی دوست فرح خان نے اپنی مرضی کے مطابق افسران کے تبادلے اور تعیناتی کے لیے بھاری رقم وصول کی اور انہیں 6 ارب روپے کے تمام سکینڈلز کی ماں قرار دیا۔ 

جسٹس فائز عیسیٰ کے خلاف ریفرنس دائر کرنا ’غلطی‘ تھی

 سابق وزیراعظم نے اعتراف کیا کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف ریفرنس دائر کرنا ایک غلطی تھی اور ان کی حکومت کو عدلیہ سے براہ راست ٹکراؤ میں جانے کے بجائے تحمل سے کام لینا چاہیے تھا۔ 

 تاہم انہوں نے واضح کیا کہ یہ ریفرنس اس وقت کی وزارت قانون نے دائر کیا تھا اور ان کی کسی سے کوئی ذاتی دشمنی نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔