بھارت کا روس کے خلاف ووٹ دینے سے امریکہ کو انکار

چین کا مقابلہ کرنے کے لئے امریکہ کی زیرقیادت کوششوں میں ایک اہم اتحادی بھارت نے یوکرین سے روس کے فوری انخلاء کا مطالبہ کرنے والے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل (یو این ایس سی) کے حق میں ووٹ نہیں ڈالا اور یوں وہ چین کی حمایت میں شامل ہو گیا ہے۔ 

 واشنگٹن میں سفارتی مبصرین اسے ایک واضح اشارے کے طور پر دیکھتے ہیں کہ ہندوستان اپنے نئے ساتھی، امریکہ کو خوش کرنے کے لیے ایک پرانے اتحادی، روس کے ساتھ اپنے تعلقات کو کشیدہ نہیں کرے گا۔ 

یہ بھی پڑھیں | یوکرین مذاکرات کے لئے تیار، روس کا نیوکلر الرٹ جاری  

 ہفتے کے روز، امریکی وزیر خارجہ انٹونی جے بلنکن نے اعلان کیا کہ امریکہ اب اس معاملے کو اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اٹھائے گا جہاں دنیا کی اقوام روس کو جوابدہ بنا سکتی ہیں اور اسے یوکرین کے ساتھ متحد ہونا چاہیے۔

 انہوں نے یوکرین کو روس کی بلا اشتعال اور بلاجواز جنگ سے اپنے دفاع میں مدد کے لیے فوری طور پر 350 ملین ڈالر کی اضافی فوجی امداد کی فراہمی کی بھی منظوری دی ہے۔

جیسا کہ توقع کی جا رہی تھی، روس نے اس قرارداد کو ویٹو کر دیا جس میں یوکرین سے تمام روسی فوجیوں کے فوری انخلاء کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ 

 برطانیہ، چین، فرانس، روس اور ریاست ہائے متحدہ امریکہ کے پانچ مستقل ارکان میں سے کسی کی طرف سے بھی ‘نہیں’ کا ووٹ کونسل کے سامنے پیش کیے جانے والے کسی بھی اقدام پر کارروائی روک دیتا ہے۔ 

 ویٹو کے سامنے عالمی ادارے کی بے بسی کو اجاگر کرتے ہوئے، سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرس نے ووٹنگ کے بعد ایک نیوز بریفنگ میں تسلیم کیا کہ اقوام متحدہ پھر اپنے بنیادی مقصد یعنی جنگ کو ختم کرنے میں ناکام رہا ہے لیکن ہمیں کبھی ہار نہیں ماننی چاہیے۔ ہمیں امن کو ایک اور موقع دینا چاہیے۔ فوجیوں کو اپنی جگہوں پہ واپس جانے کی ضرورت ہے۔ دونوں ممالک کو مذاکرات اور امن کے راستے پر چلنے کی ضرورت ہے۔ 

 متوقع روسی ویٹو سے بھی زیادہ اہم بھارت کا ووٹ سے پرہیز کرتے ہوئے چین میں شامل ہونے کا فیصلہ تھا، حالانکہ دونوں ممالک سلامتی کونسل میں اکثر ایک دوسرے کے خلاف ووٹ دیتے ہیں۔ 

 ایک اور قریبی امریکی اتحادی ملک متحدہ عرب امارات نے بھی قرارداد کی حمایت کرنے سے انکار کر دیا۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔