بلاول بھٹو نے تحریک عدم اعتماد کی کامیابی پر شک ظاہر کر دیا

پی پی پی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اتوار کو اعتراف کیا کہ پی ٹی آئی کی زیر قیادت حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد آسان کام نہیں ہے اور وہ اس کی کامیابی کی ضمانت نہیں دے سکتے ہیں۔

 تاہم، انہوں نے مزید کہا کہ اگر یہ اقدام ناکام بھی ہوا تو بھی اپوزیشن “کٹھ پتلی حکومت” کے خلاف اپنی جدوجہد جاری رکھے گی۔ 

انہوں نے یہ بیان لاہور میں ندیم افضل چن کی رہائش گاہ پر ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کے دوران دیا ۔ 

 تحریک عدم اعتماد ایک مشکل کام ہے لیکن کم از کم ایک خطرہ مول لیا جا سکتا ہے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ ضمانتوں کے انتظار کا مطلب عوام کو اس “ظالم حکومت” کے رحم و کرم پر چھوڑ دینا ہے۔ حزب اختلاف کے اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے اسلام آباد پر لانگ مارچ کرنے اور بڑے پیمانے پر استعفے پیش کرنے کے فیصلے پر گویا تنقید کرتے ہوئے بلاول نے کہا کہ تحریک عدم اعتماد پی ٹی آئی حکومت کو شدید دباؤ میں لانے کا واحد اقدام تھا یہاں تک کہ انہیں اتحادیوں کو اس کے لئے مجبور کرنا پڑا۔ 

یہ بھی پڑھیں |‘طاقتور ممالک ایف اے ٹی ایف کو پاکستان کو گرے لسٹ میں رکھنے پر زور دے رہے ہیں، وزیر خزانہ شوکت ترین

 بلاول بھٹو نے کہا کہ وہ ٹریژری بنچ کے ارکان کی مدد سے تحریک عدم اعتماد لا سکتے ہیں جنہوں نے اپوزیشن کیمپ میں موجود تینوں سیاسی جماعتوں پی پی پی، مسلم لیگ ن اور جے یو آئی-ایف کو اپنی حمایت کا یقین دلایا تھا۔ 

اگر ہمیں اتحادی شراکت داروں کی حمایت حاصل ہے، تو اس معاملے میں ہماری کامیابی کے امکانات قریب قریب ہیں۔ سیاست میں ہر ووٹ کی اہمیت ہوتی ہے۔ سیاست دان انتخابات سے قبل زیادہ سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

 انہوں نے یہ عندیہ بھی دیا کہ قومی اسمبلی کے سپیکر اسد قیصر اور وزیراعظم عمران خان دونوں کے خلاف تحریک عدم اعتماد لانے پر غور کرنا ضروری ہے۔

 پی پی پی کے سربراہ نے کہا کہ جے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان، ان کے والد اور پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف جلد ملاقات کریں گے جس میں فیصلہ کیا جائے گا کہ تحریک عدم اعتماد کب پیش کی جائے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں