او آئی سی اجلاس : وزیر اعظم عمران ّخان شرکت کے لئے پہنچ گئے

وزیر اعظم عمران خان اب سے کچھ دیر پہلے اسلامی تعاون تنظیم کے 48ویں اجلاس میں پہنچ چکے ہیں۔

وزیراعظم عمران خان نے آج منگل کو اسلام آباد میں پارلیمنٹ ہاؤس میں اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے وزرائے خارجہ کی 48ویں کونسل (سی ایف ایم) کے افتتاحی اجلاس سے اہم خطاب بھی کیا۔

او آئی سی کے کردار کے بارے میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہم فلسطینیوں اور کشمیری عوام دونوں کو محکوم بنا چکے ہیں۔ مجھے یہ کہتے ہوئے دکھ ہو رہا ہے کہ ہم کوئی فرق نہیں ڈال سکے۔ 

 وزیر اعظم نے کہا کہ مغربی ممالک نے او آئی سی کو سنجیدگی سے نہیں لیا کیونکہ ہم تقسیم ہیں اور وہ طاقتیں یہ جانتی ہیں۔

 ہم مسلمان 1.5 بلین لوگ ہیں اور اس کے باوجود اس صریح ناانصافی کو روکنے کے لیے ہماری آواز کوئی اہمیت نہیں رکھتی۔

 وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ بین الاقوامی قانون فلسطین اور کشمیر کے عوام کے حق میں ہے، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں میں استصواب رائے کے ذریعے کشمیریوں کے حق خود ارادیت کی حمایت کی گئی ہے۔ تاہم، بین الاقوامی برادری نے کبھی بھی اس حق کو یقینی نہیں بنایا ہے۔

  اگست 2019 میں بھارت کی طرف سے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کا حوالہ دیتے ہوئے، انہوں نے کہا کہ کچھ نہیں ہوا کیونکہ وہ (بھارت) کوئی دباؤ محسوس نہیں کرتے نا دباؤ ڈالا جاتا ہے۔

انہیں لگتا ہے کہ ہم صرف ایک قرارداد پاس کر سکتے ہیں اور پھر اپنے معمول کے کاروبار پر واپس آ جاتے ہیں۔

 انہوں نے کہا کہ جب تک او آئی سی بنیادی مسائل پر متحد نہیں ہوتی، انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں ہوتی رہیں گی جیسے کہ فلسطین میں ہو رہی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں | سندھ ہاؤس میں حملہ پر دو ایم این ایز کے خلاف ایف آئی آر  درج 

 مجھے صرف ایک امید ہے کہ پہلی بار سوشل میڈیا کی وجہ سے مغربی ممالک میں بیداری آئی ہے، او آئی سی سے کہیں زیادہ وہ موبائل فون اور فلسطینیوں کے ساتھ ہونے والی ناانصافیوں کی معلومات پھیلانے کا کام کر رہے ہیں۔ 

 انہوں نے کہا کہ بھارت باہر سے آباد کاروں کو لا کر مقبوضہ کشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل کر رہا ہے لیکن کسی کو کوئی پرواہ نہیں ہے۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں