امریکی انتخابات:ٹرمپ نے امریکی تین ریاستوں کے ووٹنگ رزلٹ کو چیلنج کر دیا

ڈونلڈ ٹرمپ اور جو بائیڈن دونوں کے دعوے امریکی صدارتی انتخابات میں آگے ہونے کے ہیں حتی کہ حتمی نتیجہ ابھی تک موصول نہیں ہوا ہے لیکن دونوں فریق قانونی کارروائی کے لئے بھی تیار ہیں۔ 

ٹرمپ نے وسکونسن ، جارجیا ، پنسلوانیہ اور مشی گن کی اہم ریاستوں میں ووٹوں کی گنتی کو چیلنج کر دیا ہے۔ بی بی سی کے پروجیکٹر مسٹر بائیڈن نے مشی گن میں جیت حاصل کر لی ہے۔

 امریکی میڈیا نے پیش گوئی کی ہے کہ اس نے وسکونسن میں جیت بنا لی ہے جبکہ پنسلوینیا میں ابھی تک کوئی نتیجہ سامنے نہیں آیا ہے۔ ان تینوں ریاستوں کو زنگ بیلٹ ریاستوں کے جیتنے سے جو بائیڈن کی فتح ہوگی۔ اس وقت نیواڈا اور اریزونا میں بھی ڈیموکریٹک امیدوار برتری حاصل کر رہا ہے ،جبکہ جارجیا میں گنتی بدستور جاری ہے اور  ٹرمپ کی جیت کے مابین فاصلے بڑھ رہے ہیں۔ 

جو بائیڈن  فتح کا اعلان کرنے سے باز رہے ہیں لیکن انھیں یقین ہے کہ وہ اپنے ریپبلکن حریف کو شکست دینے کے لئے تیار ہیں۔

مزید پڑھئے | ٹرمپ کےجوبائڈن پر انتخابات چوری کرنے کی کوشش کے دعوے کو ٹویٹر نے گمراہ کن قرار دے دیا

 امریکی الیکشن پروجیکٹ کے مطابق ، منگل کے انتخابات میں مجموعی طور پر ٹرن آؤٹ 120 سالوں میں سب سے زیادہ 66.9 فیصد رہنے کا امکان ہے۔ جو بائیڈن کو 70.5 ملین رائے دہندگان کی حمایت حاصل تھی جو اب تک کے کسی بھی صدارتی امیدوار سے زیادہ ہے۔  ٹرمپ نے 67.2 ملین ووٹ حاصل کیے ہیں جو 2016 میں حاصل کیے تھے اس سے چار لاکھ زیادہ ہیں۔

 کوڈ ٹریکنگ پروجیکٹ کے مطابق بدھ کے روز امریکہ میں  103،000 کیسز کا اضافہ ہوا ہے۔

جو بائیڈن نے یہ بھی کہا کہ وہ پینسلوینیا کے بارے میں بہت اچھا محسوس کر رہے ہیں اگرچہ صدر ٹرمپ کی مہم  تمام قانونی بیلٹ کی گنتی پر ریاست میں فتح کا اعلان کررہی ہے۔ 

سینئر ٹرمپ مہم کے معاون جیسن ملر نے کہا ہے کہ اس ہفتے کے آخر تک پوری قوم پر یہ واضح ہوجائے گا کہ صدر ٹرمپ اور نائب صدر پینس کو مزید چار سال کے لئے منتخب کیا جائے گا۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *