اسلام آباد نیب کورٹ نے اسحاق ڈار کے وارنٹ گرفتاری معطل کر دئیے

اسحاق ڈار کے وارنٹ گرفتاری معطل

اسلام آباد کی احتساب عدالت نے جمعہ کو سابق وزیر خزانہ اور مسلم لیگ (ن) کے رہنما اسحاق ڈار کو اشتہاری قرار دینے سے متعلق کیس میں ان کے وارنٹ گرفتاری معطل کر دیے۔ 

سال 2017 میں، عدالت نے اسحاق ڈار – جو لندن میں ہیں – کو کرپشن کے ایک ریفرنس میں مفرور قرار دیا تھا جبکہ وہ اپنے خلاف مقدمے میں شامل ہونے میں ناکام رہے۔ 

 آج سماعت کے دوران مسلم لیگ ن کے رہنما کے وکیل قاضی مصباح نے عدالت سے ان کے موکل کے خلاف جاری کیے گئے وارنٹ گرفتاری واپس لینے کی استدعا کی۔

 قومی احتساب بیورو کو اسحاق ڈار کو گرفتار کرنے سے روکا جائے۔ وہ پاکستان میں اترتے ہی سیدھا عدالت میں آئے گا۔

وارنٹ گرفتاری 7 اکتوبر تک معطل

 بعد ازاں احتساب جج محمد بشیر نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما کی درخواست منظور کرتے ہوئے ان کے وارنٹ گرفتاری 7 اکتوبر تک معطل کر دئیے۔ انھوں نے نیب کو سابق وزیر خزانہ کو عدالت میں پیش ہونے کا موقع دیتے ہوئے اسحاق ڈار کی گرفتاری سے بھی روک دیا۔ 

 جج نے مزید کہا کہ ہم اسحاق ڈار کے ذاتی طور پر عدالت میں پیش ہونے کے بعد ان کے وارنٹ گرفتاری کو مستقل طور پر معطل کرنے پر غور کریں گے۔

یہ بھی پڑھیں | رانا ثناء اللہ کو چھپنے کی جگہ نہیں ملے گی، عمران خان

یہ بھی پڑھیں | حقیقی آزادی کی تحریک 24 ستمبر سے شروع ہو گی، عمران خان

اسحاق ڈار کے وکیل نے جمعرات کو وارنٹ گرفتاری واپس لینے کی درخواست دائر کی۔ درخواست میں استدعا کی گئی کہ ڈار کو وطن واپس آنے پر گرفتار نہ کیا جائے کیونکہ وہ ٹرائل میں شامل ہونے کے لیے عدالت میں ہتھیار ڈالنا چاہتے ہیں۔ 

 اس کے بعد احتساب عدالت نے نیب کو 23 ستمبر کو اپنا ورژن داخل کرنے کا نوٹس جاری کیا تھا۔ 

 اس سے قبل اسحاق ڈار نے احتساب عدالت کے اس حکم کے خلاف بھی سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا جس میں ان کے خلاف بدعنوانی کے مقدمے کی سماعت کے دوران انہیں ذاتی طور پر پیش ہونے کی ضرورت تھی۔

صحت ہوائی سفر کرنے کی اجازت نہیں دیتی

اپنے وکیل کے توسط سے دائر درخواست میں ڈار نے عدالت عظمیٰ سے انہیں پاکستان واپس جانے سے استثنیٰ دینے کا حکم دینے اور ان کے وکیل کو احتساب عدالت میں ان کی نمائندگی کرنے کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا کیونکہ ان کی صحت انہیں ہوائی سفر کرنے کی اجازت نہیں دیتی۔

 تاہم 22 ستمبر کو مسلم لیگ ن کے رہنما نے اپنی درخواست واپس لے لی۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔