مصنف کے بارے میں

صفحۂ اول

اسرائیل اور غزہ جنگ میں نرمی کا امکان، عالمی برادری کا نوٹس

اسرائیل کی جانب سے غزہ پر کئی ہفتوں سے جاری حملوں اور حماس کی جوابی کاروائیوں پر عالمی برادری نے اسرائیل سے جنگ بندی کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

 امید ظاہر کی جا رہی ہے کہ اسرائیل کی جانب سے غزہ پر جاری مسلسل بمباری میں نرمی کی جائی گی۔

 اسرائیلی فوج نے اپنے ایک بیان میں بتایا کہ حماس اور دیگر فلسطینی گروپوں کی جانب سے سوموار کے روز غزہ سے قریب 3،350 راکٹ فائر کیے تھے۔ 

اسرائیلی زرائع کے مطابق اسرائیلی فضائی حملوں میں کم از کم 130 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں۔ غزہ کے شعبہ صحت نے بتایا کہ گذشتہ ہفتے سے اب تک فلسطینیوں کی ہلاکتوں کی تعداد 212 ہو چکی ہے جن میں 61 بچے اور 36 خواتین شامل ہیں۔ دوسری جانب حماس کی جانب سے کئے گئے جوابی حملوں میں اسرائیل میں دو بچوں سمیت دس افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

  امریکی فوج کے اعلی افسر ، آرمی جنرل مارک میلے نے خبردار کیا ہے کہ یہ لڑائی عالمی جنگ کا باعث بن سکتی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ان کے اندازہ کے مطابق دنیا کو وسیع تر عدم استحکام کا خطرہ ہے اور اگر لڑائی جاری رہی تو  منفی نتائج کی ایک پوری سیریز کا خطرہ ہے۔

جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کے چیئرمین ملی نے پیر کو برسلز میں نیٹو اتحادیوں کے ساتھ بات چیت کے لئے لینڈنگ سے قبل صحافیوں کو بتایا کہ جنگ کا جاری رکھنا کسی کے مفاد میں نہیں ہے۔ 

یہ بھی پڑھیں | شہباز شریف کا نام ای سی ایل میں ڈال دیا گیا ہے، شہباز شریف

فلسطینی انکلیو میں اسرائیلی فضائی حملے ساری رات جاری رہے۔ فجر کے فورا. بعد ، میزائلوں نے غزہ شہر میں دو عمارتوں کو نشانہ بنایا۔ غزہ پٹی میں حماس مجاہدین نے منگل کے اوائل میں راکٹ فائر کیے تھے جس نے جنوبی اسرائیلی شہروں میں سائرن بجائے جس سے ہزاروں افراد بم پناہ گاہوں کے لئے بھاگ رہے تھے۔ 

   وائٹ ہاؤس نے ایک بیان میں بتایا کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے پیر کے روز اسرائیلی وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو سے ملاقات کے دوران فائر بندی کی حمایت کا اظہار کیا۔ لیکن نیتن یاھو نے اسرائیلیوں کو بتایا تھا کہ غزہ میں حماس مجاہدین کے مقامات اور رہنماؤں کے خلاف کریک ڈاؤن جاری رہے گا۔ 

 اسرائیل کی جانب سے غزہ میں موجود ایک ایسی عمارت کو بھی نشانہ بنایا گیا جس میں الجزیرہ سمیت دیگر پریس تھے- اقوام متحدہ نے اسرائیل سے ثبوت مانگے ہیں کہ وہ ثابت کرے کہ اس عمارت میں حماس کا کوئی دفتر تھا۔ اسرائیل کی جانب سے دعوی کیا گیا کہ حماس کے دفتر کی وجہ سے عمارت تباہ کی جبکہ حماس نے اس کو جھوٹ قرار دیا ہے۔ 

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔