اسحاق ڈار کو نیا پاکستانی پاسپورٹ مل گیا

اسحاق ڈار نے جولائی کے تیسرے ہفتے میں پاکستان واپس آنے کا فیصلہ کیا

 سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے جولائی کے تیسرے ہفتے میں پاکستان واپس آنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ انہیں اپنا نیا پاکستانی پاسپورٹ مل گیا ہے۔ 

معتبر ذرائع نے بتایا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے قائد نواز شریف نے ڈار کو پاکستان واپس آنے کی اجازت دے دی ہے۔ 

اسحاق ڈار جولائی کے تیسرے ہفتے میں پاکستان واپس آئیں گے اور ان کے سفر کے انتظامات کر لیے گئے ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ ڈار نے ایک قانونی ٹیم کی خدمات حاصل کی ہیں اور وہ ان کی مشاورت سے اگلے اقدامات کریں گے۔ 

 ذرائع نے بتایا ہے کہ اسحاق ڈار اپنے خلاف درج مقدمات کا سامنا کریں گے اور پاکستان پہنچنے کے فوراً بعد سینیٹر کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریاں سنبھالیں گے۔ 

ذرائع نے بتایا کہ اسحاق ڈار کے خلاف مقدمات جعلی اور سیاسی طور پر محرک ہیں۔ ان انتقامی مقدمات کا پس منظر سب کو معلوم ہے اور ڈار کو اس وقت کی پی ایم ایل این حکومت کو گرانے کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ 

یہ بھی پڑھیں | آصف علی زرداری نے “جیالوں” کو بلدیاتی انتخابات فیز 2 کے لئے تیار رہنے کا حکم دے دیا

یہ بھی پڑھیں | لاہور ہائیکورٹ: پی ٹی آئی رہنماؤں کی ضمانت منظور

ذرائع کا کہنا ہے کہ اسحاق ڈار کے خلاف ایک کیس ہے جس میں ان پر 22 سال سے اپنے اثاثوں کی تفصیلات جمع نہ کرانے کا الزام ہے۔ اسحاق ڈار نے موقف اختیار کیا کہ وہ اپنے اثاثوں کا 32 سالہ ریکارڈ پہلے ہی جمع کرا چکے ہیں جس کا مقصد اس وقت انصاف نہیں بلکہ انتقام اور سیاسی انجینئرنگ تھا۔

ذرائع نے بتایا کہ ڈار کو پاکستان کی وزارت داخلہ کی جانب سے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کے خاتمے کے بعد پی ایم ایل این کے اقتدار میں آنے کے فوراً بعد اپنا پاکستانی پاسپورٹ مل گیا تھا۔ پاکستانی حکومت کی جانب سے ان کے اور ان کی اہلیہ کے سفارتی پاسپورٹ منسوخ کرنے کے بعد ستمبر 2018 میں ڈار لندن میں بے وطن ہو گئے تھے۔ 

ان کے پاسپورٹ کی منسوخی کا مطلب یہ تھا کہ وہ سفری دستاویزات کے بغیر لندن میں تھے اور سپریم کورٹ آف پاکستان کے سامنے پیش ہونے کی ڈیڈ لائن کی تعمیل کرنے کے لیے پاکستان کا سفر کرنے سے قاصر تھے۔

اسحاق ڈار نے کہا تھا کہ وہ پاکستان کا سفر کرنے سے قاصر ہیں کیونکہ وہ لندن میں زیر علاج تھے اور وزارت کو ان کے ڈاکٹر کی جانب سے متعلقہ نوٹرائزڈ خطوط بھیجے گئے تھے، جن کی تصدیق برطانیہ کی وزارت خارجہ نے کی تھی، جس میں اس بات کی تصدیق کی گئی تھی کہ ان کا علاج جاری ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم شہباز شریف نے ڈار سے کہا تھا کہ وہ پاکستان واپس آکر اپنی ٹیم کا حصہ بنیں اور انہیں ملک کے معاشی امور پر مشورہ دیں۔

حرمین رضا

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

ہمارا نیوز لیٹر جوائن کریں
تازہ ترین آرٹیکلز، نوکریوں اور تفریحی خبریں ڈائریکٹ اپنے انباکس میں حاصل کریں
یہاں ایک لاکھ ستر ہزار سبسکرائبرز ہیں