اتوار کو ایشیاء کے پندرہ ممالک نے دنیا کے سب سے بڑے آزاد تجارتی معاہدے پر دستخط کیے

ایشیاء کے پندرہ ممالک نے اتوار کے روز دنیا کے سب سے بڑے آزاد تجارتی معاہدے پر دستخط کیے ہیں جس پر چین کو اپنا اثر و رسوخ بڑھانے میں ایک بہت بڑی بغاوت کی حیثیت سے دیکھا جا رہا ہے۔ 

علاقائی جامع اقتصادی شراکت داری (آر سی ای پی) میں چین ، جاپان ، جنوبی کوریا ، نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا کے ساتھ ساتھ 10 جنوب مشرقی ایشین معیشتیں شامل ہیں جن میں اراکین عالمی مجموعی گھریلو پیداوار کا تقریبا 30 فی صد ہیں۔ 

سب سے پہلے 2012 میں تجویز دی گئی تھی جنکہ اب کورونا سے متاثرہ معیشتوں کو واپس اصلی حالت میں لانے کے لئے اس معاہدے پر بالآخر جنوب مشرقی ایشین سربراہی اجلاس کے اختتام پر مہر لگا دی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں | جنرل قمر باجوہ اور بل گیٹس کی پاکستان میں پولیو اور کورونا سے متعلق تبادلہ خیال

موجودہ عالمی حالات میں حقیقت یہ ہے کہ آٹھ سالوں کے مذاکرات کے بعد آر سی ای پی پر دستخط ہوئے ہیں جسے  روشنی اور امید کی کرن قرار دیا گیا ہے۔

یہ معاہدہ واضح طور پر عالمی معیشت اور انسانیت کی ترقی کی صحیح سمت کی نمائندگی کرتا ہے۔ نرخوں کو کم کرنے اور بلاک کے اندر خدمات کی تجارت کو کھولنے کے معاہدے میں امریکہ شامل نہیں ہے اور اسے واشنگٹن کے ایک ناکارہ تجارتی اقدام کے لئے چین کی زیرقیادت متبادل کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔

 سنگاپور بزنس اسکول کی نیشنل یونیورسٹی کے تجارتی ماہر الیگزینڈر کیپری نے بیجنگ کے دستخطی سرمایہ کاری کے منصوبے کا حوالہ دیتے ہوئے ، جس نے عالمی سطح پر پائے جانے والے چینی بنیادی ڈھانچے اور اثر و رسوخ کا تصور کیا ہے ، کہا ہے کہ آر سی ای پی نے بیلٹ اینڈ روڈ پہل کے آس پاس چین کے وسیع تر علاقائی جیو پولیٹیکل عزائم کو مستحکم کیا ہے۔

شئر کریں

جاویریہ حارث

جاویریہ حارث اردو خبر میں پاکستان میں مقیم مصنف اور سابق ایڈیٹر ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *